حکومت کی کارکردگی اسمبلی انتخابات میں ریفرنڈم : کے ٹی آر

کانگریس ترقی میں رکاوٹ، عوام میں پیش کرنے وسط مدتی انتخابات

حیدرآباد 13 اکٹوبر (سیاست نیوز) وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ٹی راما راؤ نے کہاکہ چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ نے عوامی بھلائی کے لئے جو فلاحی اقدامات کئے ہیں، اُن سے کانگریس خوفزدہ ہے۔ ریاست کی ترقی کو روکنے کے لئے کانگریس نے عدالت میں مقدمات دائر کئے لہذا کانگریس کو عوام کے درمیان ملزم کے طور پر پیش کرنے کے لئے وسط مدتی انتخابات کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ کے ٹی آر نے کہاکہ گزشتہ چار برسوں میں کئے گئے ترقیاتی کام حکومت کا اہم انتخابی ایجنڈہ رہیں گے اور یہی حکومت کے لئے ریفرنڈم ثابت ہوگا۔ حکومت کی کارکردگی ٹی آر ایس کی کامیابی کے لئے کافی ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ گزشتہ چار برسوں میں کانگریس پارٹی کے رویہ کو دیکھ کر عوام اُسے اہم اپوزیشن کا عہدہ بھی نہیں دیں گے۔ اُنھوں نے کانگریس کو چیلنج کیاکہ وہ اپنی کارکردگی کو ریفرنڈم کے طور پر قبول کرے۔ کانگریس نے جس انداز میں ترقی میں رکاوٹ پیدا کی ہے وہ عوام کے سامنے ہے اور انتخابات میں اُسے رائے دہندے مناسب سبق سکھائیں گے۔ اُنھوں نے کہاکہ اقتدار کے لئے کانگریس نے مخالف تلنگانہ طاقتوں سے اتحاد کرلیا ہے۔ کریم نگر کے ویملواڑہ اسمبلی حلقہ میں بی جے پی سے تعلق رکھنے والے قائدین نے آج ٹی آر ایس میں شمولیت اختیار کرلی۔ کے ٹی آر نے اِن کا پارٹی میں استقبال کیا۔ اُنھوں نے بی جے پی اور کانگریس کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہاکہ مرکز میں برسر اقتدار بی جے پی نے تلنگانہ کے ساتھ ناانصافی کی ہے۔ اُنھوں نے بی جے پی قومی صدر امیت شاہ کے اِس دعوے کو مسترد کردیا کہ تلنگانہ کو مرکز نے مناسب فنڈس جاری کئے تھے۔ اُنھوں نے کہاکہ عوام عظیم اتحاد اور بی جے پی کے پروپگنڈہ سے متاثر نہیں ہوں گے۔

TOPPOPULARRECENT