Saturday , November 17 2018
Home / شہر کی خبریں / حیدرآبادیوں کو عوامی حمل و نقل کے ذرائع پسند لیکن مسائل حل طلب

حیدرآبادیوں کو عوامی حمل و نقل کے ذرائع پسند لیکن مسائل حل طلب

حیدرآباد ۔ 3 نومبر (سیاست نیوز) حیدرآباد کو کئی ایک سہولیات کی وجہ سے ہندوستان کے چند بہترین میٹرو شہروں میں شمار کیا جاتا ہے اور اب یہاں کے عوام کی جانب سے عوامی حمل و نقل کو پسند کرنے کی رپورٹ سامنے آئی ہے۔ تاہم اس کی دیکھ بھال اور صفائی میں مزید بہتری پر زور دیا ہے۔ اولا موبیلیٹی انسٹیٹیوٹ کی جانب سے جاری کردہ حیدرآباد میں حمل و نقل کے ذرائع اور شہریوں کی پسند و ترجیحات کے ضمن میں اعداد و شمار نے حیدرآباد میں ہندوستان کے میٹرو شہروں کی درجہ بندی میں 5.22 نشانات فراہم کئے ہیں جبکہ ہندوستان کے بہترین میٹرو شہروں کی فہرست میں کولکتہ 5.42 نشانات کے ساتھ سب سے آگے ہے جبکہ نئی دہلی اور چینائی بھی اس مسابقت میں شامل ہیں۔ حیدرآبادی عوام نے ایک سروے میں اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ حمل و نقل کے ذرائع کے انتخابات میں محفوظ ذرائع، پارکنگ کی سہولت، فٹ پاتھ کی حالت، ایک مقام سے دوسرے مقام تک رابطے کی سہولیات کی بنیاد پر انتخاب کرتے ہیں۔ حیدرآبادیوں نے اندرون شہر عوامی حمل و نقل کے ذرائع کی ستائش کی ہے چونکہ صرف 15 منٹ کے پیدل سفر کے ساتھ ہی وہ سواری تک پہنچ جاتے ہیں جبکہ ایک مقام سے دوسرے مقام تک آخری منزل کیلئے سواریوں کا بہتر انتظام بھی انہیں پسندیدہ ظاہر کیا ہے۔ رپورٹ کے اعداد و شمار کے بموجب حیدرآباد کے 64 فیصد عوام عوامی حمل و نقل استعمال کرتے ہیں جن میں 85 فیصد عوام ایسے ہیں جنہیں گھر سے صرف 15 منٹ کے فاصلے پر عوامی حمل ون قل کی کوئی نہ کوئی سواری مل جاتی ہے۔ تاہم ان مسافرین میں خواتین کی تعداد صرف 41 فیصد ہی ہے جبکہ 60 فیصد خواتین نے اظہارخیال میں کہا ہیکہ اگر عوامی حمل و نقل کے سواریوں کو مزید بہترین بنایا جائے تو وہ خانگی سواریوں کے بجائے عوامی سواریوں کو استعمال کرنے کو ترجیح دے گی۔ سروے میں حیدرآباد کیلئے مایوس کن نتیجہ یہ رہا کہ صفائی کے معاملے میں اسے پانچواں مقام ملا ہے جبکہ سڑکوں کی حالت کی فہرست میں چوتھا اور سواریوں کی فہرست میں بھی حیدرآباد کو چوتھا ہی مقام حاصل ہوا ہے۔ اس رپورٹ میں ایک تشویشناک پہلو یہ بھی ظاہر کیا گیا ہے کہ سالانہ جو 2 لاکھ کاریں بازار میں متعارف ہورہی ہیں ان سے ٹریفک کا مسئلہ تشویشناک حد تک بڑھ گیا ہے اور سڑکوں پر گاڑیوںکی رفتار میں کمی ہونے کے ساتھ ٹریفک میں پھنسے رہنے کا وقت بھی بڑھ رہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT