Saturday , December 15 2018

حیدرآباد سیمی کارکنوں کی سرگرمیوں سے پاک

خوف و سنسنی کی ضرورت نہیں ‘ وزیر داخلہ نرسمہا ریڈی کا بیان

خوف و سنسنی کی ضرورت نہیں ‘ وزیر داخلہ نرسمہا ریڈی کا بیان
حیدرآباد۔6اپریل ( این ایس ایس ) مرکز نے حال ہی میں جیل سے فرار ہونے والے سیمی کے تین کارکنوں کی گرفتاری کے لئے نیشنل انوسٹیگشن ایجنسی ( این آئی اے ) کو پہلے ہی متحرک کردیا تھا لیکن تلنگانہ کے وزیر داخلہ این نرسمہا ریڈی نے حیرت انگیز انکشاف کیا کہ انہیں صرف گذشتہ روز ہی علم ہوا کہ پولیس انکاؤنٹر میں ہلاک دو افراد سیمی کے کارکن تھے ۔ مسٹر نرسمہا ریڈی نے یہاں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے اعتراف کیا کہ دونوں مہلوکین سیمی کے کارکن تھے اور انٹیلجنس اور پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں نے بھی اس کی توثیق کی ہے ۔ مسٹر ریڈی نے کہا کہ ’’ خوف و سنسنی کی کوئی ضرورت نہیں ہے کیونکہ حیدرآباد کے عوام پُرامن ماحول میں زندگی گذار رہے ہیں جہاں ( اس شہر ) میں دہشت گردی یا سیمی کی کوئی سرگرمیاں نہیں ہیں اور اگر ایسی کسی سرگرمی کا شبہ ہوگا تو خاطیوں کو پکڑنے کیلئے حکومت کی جانب سے پولیس اور انٹیلجنس کو متحرک کردیا جائے گا ۔ دو مہلوکین کے سیمی سے مبینہ رابطوں کے بارے میں پولیس کی جانب سے انہیں واقف نہ کئے جانے پر کی جانے والی تنقیدوں کے جواب میں مسٹر نرسمہا ریڈی نے کہا کہ اس واقعہ کے باوجود شہر میں سیمی کے کارکن نہیں ہیں اور ان کی سرگرمیاں بھی نہیں ہیں ۔ اگر ضروری ہو تو خاطیوں کو پکڑنے کیلئے پولیس اور انٹیلجنس کو متحرک کیا جائے گا ۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ حملہ آوروں کے دہشت گردی سے روابط کے بارے میں وزیر داخلہ کو بروقت مطلع کرنے میں پولیس ناکام ہوگئی تھی ۔ اس واقعہ کے بعد وی آئی پیز ( انتہائی اہم شخصیات) عوامی نمائندوں اور اعلیٰ عہدیداروں کے تحفظ و سلامتی کو یقینی بنانے کیلئے حکومت نے سیکیورٹی پر جائزہ اجلاس منعقد کیا ۔

TOPPOPULARRECENT