Sunday , July 22 2018
Home / شہر کی خبریں / حیدرآباد میں زیر زمین پانی کی سطح میں تشویش ناک گراوٹ

حیدرآباد میں زیر زمین پانی کی سطح میں تشویش ناک گراوٹ

حیدرآباد ۔15 اپریل (سیاست نیوز) تلنگانہ میں حکومت نے پانی کی زمینی سطحوں میں گرواٹ کے سلسلے کو روکنے کے لئے بورویل کھودنے کی اجازت نہیں دی ہے تاہم پینے کے پانی کے لئے بوریل کھودنے کی اجازت موجود ہے جس کی اہم وجہ زمین میں پانی کی سطح میں تشویش ناک حد تک گراوٹ ریکارڈ کی جارہی ہے اور اب حیدرآباد میں بھی زیر زمین پانی کی سطح باعث تشویش ہے ۔فروری کے مہینے میں اوسط زمینی سطح جو 13.6 میٹر تھی ابھی تک 14.19 میٹر تک گرگئی ہے۔ پانی کی سطح موسم خزاں میں 1.8 میٹر تھی لیکن چند مہینوں کے اندر ہی یہ تشویش ناک اعداد شمار رجسٹر کئے گئے ہیں۔تلنگانہ کے دیگر اضلاع میں اس سے زیادہ متاثرہ علاقہ ہے اور ضلع میں پانی کی سطح 25.65 میٹرکے ساتھ سب سے زیادہ زوال رجسٹر کیا گیا ہے، حالانکہ فروری میں یہ سطح 24.6 میٹردرج کی گئی تھی۔ اس کے بعد گمادادیلا 24.7 میٹر اورسنگاریڈی سے 23.02 میٹر ریکارڈ کیا گیا ہے ۔دریں اثناء جن علاقوں میںپانی کی زمینی سطح کے حالات بہتر ہو چکے تھے وہ سطح بھی اب نیچے جا رہی ہے۔ مثال کے طور پر، امین پور میں مارچ کے مہینے میں پانی کی سطح گزشتہ ماہ کے مقابلے میں 2.1 میٹر تھی، جو اب 2.38 میٹرہوگئی ہے۔ اسی طرح، ویٹپییلی 6.03 (پہلے 5.01) میٹر اور پٹچرو 7.42 (پہلے 7.6 میٹر) پانی کی سطح پر ایک نمایاں تبدیلی دیکھی گئی ہے ۔اس وقت، سنگاریڈی ضلع میں زمینی پانی کی دستیابی کی سطح 14.19 میٹر، سدی پیٹ 16.1 اور میدک ضلع 19.95 ہوچکی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT