Saturday , November 18 2017
Home / شہر کی خبریں / حیدرآباد میں فارماسٹی کے قیام کیلئے حکومت سنجیدہ

حیدرآباد میں فارماسٹی کے قیام کیلئے حکومت سنجیدہ

اراضی حصول کا کام جاری، تین لاکھ افراد کو روزگار کے مواقع : کے ٹی آر

حیدرآباد۔26 ڈسمبر (سیاست نیوز) وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ٹی راما رائو نے کہا کہ حیدرآباد فارما سٹی کے قیام کے سلسلہ میں حکومت سنجیدہ ہے اور اس سلسلہ میں اراضی کے حصول کا کام جاری ہے۔ انہوں نے عوامی نمائندوں سے اپیل کی کہ وہ کسانوں اور دیگر خانگی افراد سے بات چیت کرتے ہوئے اراضی کے حصول کو یقینی بنائے۔ حکومت کی جانب سے مناسب معاوضہ ادا کیا جارہا ہے اور بیشتر علاقوں میں کسان راضاکارانہ طور پر اراضی حوالے کررہے ہیں۔ اسمبلی میں وقفہ سوالات کے دوران فارماسٹی کے قیام کے مسئلہ پر کے ٹی آر نے کہا کہ فارماسٹی میں راست یا بالواسطہ طور پر تین لاکھ افراد کو روزگار کے مواقع حاصل ہوں گے۔ 2018ء کے اوائل میں فارماسٹی کا پہلا مرحلہ مکمل کرلیا جائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ اراضی کے حصول کے لئے 2013ء کے قانون کے مطابق عمل کیا جارہا ہے۔ فارماسٹی کے لئے 8500 ایکڑ اراضی کی ضرورت ہے اور اب تک 5486 ایکڑ اراضی حاصل کرلی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اراضی کے حصول کا کام شفافیت کے ساتھ جاری ہے اور کسانوں پر کوئی دبائو نہیں ہے۔ انہوں نے اپوزیشن جماعتوں کو مشورہ دیا کہ وہ حقائق جانے بغیر حکومت پر تنقید سے گریز کریں۔ انہوں نے بتایا کہ ملک میں ملک کی ادویات کا 35 فیصد تلنگانہ میں تیار ہوتا ہے اس طرح تلنگانہ فارماسٹی کے قیام کے لئے موزوں مقام ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ماحولیاتی آلودگی سے فارماسٹی کو پاک رکھنے کے لئے چین اور سنگاپور میں موجود فارما سٹیز کا دورہ کیا گیا اور ماہرین نے آلودگی سے پاک سٹی کی تعمیر کا منصوبہ بنایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پراجیکٹ کے لئے ماحولیاتی منظوری کے بعد عوامی سماعت کا اہتمام کیا جائے گا۔ ٹی آر ایس ارکان ویویکانند، سدھیر ریڈی اور راجندر ریڈی نے اس پراجیکٹ کا خیرمقدم کیا تاہم انہوں نے کسانوں کو مناسب معاوضے کا مطالبہ کیا۔ کانگریس کے رکن ومشی چند ریڈی اور ٹی آر ایس کے ارکان تیگل کرشنا ریڈی، منچی ریڈی کشن ریڈی نے اپنے حلقہ جات میں اراضی کے حصول کے سلسلہ میں تفصیلات بیان کیں۔

TOPPOPULARRECENT