Wednesday , November 22 2017
Home / شہر کی خبریں / نامزد عہدوں پر تقررات کیلئے چیف منسٹر کا دفتر متحرک

نامزد عہدوں پر تقررات کیلئے چیف منسٹر کا دفتر متحرک

دسہرہ کے بعد کارپوریشنوں اور اقلیتی اداروں میں تقررات، چیف منسٹر کو تفصیلات کی پیشکشی
حیدرآباد۔/17اکٹوبر،( سیاست نیوز) نامزد عہدوں پر تقررات سے متعلق چیف منسٹر کے وعدہ کی تکمیل کیلئے چیف منسٹر کا دفتر متحرک ہوچکا ہے۔ چیف منسٹر نے دسہرہ سے قبل مارکٹ کمیٹیوں اور مندر کمیٹیوں پر تقررات مکمل کرنے کا فیصلہ کیا جبکہ دسہرہ کے بعد کارپوریشنوں اور دیگر اداروں پر تقررات کئے جائیں گے۔ چیف منسٹر کے دفتر کی جانب سے اقلیتی بہبود کے تمام اداروں کی تفصیلات طلب کی گئی ہیں اور عہدیداروں نے کل رات دیر گئے اداروں اور ان میں موجود جائیدادوں کی تفصیلات روانہ کردیں۔ اقلیتی کمیشن، وقف بورڈ ، حج کمیٹی، اردو اکیڈیمی، اقلیتی فینانس کارپوریشن اور وقف ٹریبونل کے بارے میں موجود ایکٹ اور ان اداروں میں نامزد عہدوں کی تعداد کے بارے میں تفصیلات روانہ کردی گئیں۔ چیف منسٹر کے دفتر کو بتایا گیا ہے کہ اردو اکیڈیمی اور وقف بورڈ کی تقسیم کا عمل ابھی باقی ہے لہذا ان دونوں اداروں پر فوری تقررات ممکن نہیں۔ چیف منسٹر کے دفتر نے ان اداروں میں صدرنشین کے علاوہ ارکان کی تعداد کے بارے میں ایکٹ کے تحت موجود گنجائش پر استفسار کیا۔ بتایا جاتا ہے کہ چیف منسٹر دسہرہ کے بعد اقلیتی کمیشن اور حج کمیٹی کی تشکیل کے خواہاں ہیں۔ ٹی آر ایس قائدین حکومت سے مسلسل نمائندگی کررہے ہیں کہ اقلیتی فینانس کارپوریشن، اردو اکیڈیمی، حج کمیٹی اور کمیشن پر فوری تقررات عمل میں لائے جائیں تاکہ اقلیتی قائدین اور کارکنوں میں اعتماد بحال کیا جاسکے۔ نئی ریاست کی تشکیل اور ٹی آر ایس حکومت کے قیام کے بعد سے آج تک اقلیتی اداروں پر تقررات نہیں کئے گئے جس کے باعث اقلیتوں میں بے چینی پائی جاتی ہے۔ چیف منسٹر نے گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کے انتخابات سے قبل اقلیتی اداروں پر تقررات کا من بنایا ہے تاکہ مجالس مقامی کے انتخابات میں پارٹی کو فائدہ ہو اور نامزد قائدین پوری دلچسپی کے ساتھ پارٹی کی انتخابی مہم میں حصہ لیں۔ ذرائع کے مطابق چیف منسٹر نے نامزد عہدوں میں شہر کے علاوہ اضلاع کے اقلیتی قائدین کو مکمل انصاف فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سلسلہ میں ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی کے علاوہ وزراء سے ان کے متعلقہ اضلاع میں سرگرم قائدین اور کارکنوں کی تفصیلات روانہ کرنے کی خواہش کی گئی۔ چیف منسٹر دفتر کی ان سرگرمیوں کے بعد اقلیتی قائدین پُرامید ہیں کہ انہیں بہت جلد انصاف مل پائے گا۔

TOPPOPULARRECENT