Saturday , November 25 2017
Home / شہر کی خبریں / حیدرآباد کے بشمول آوٹر رنگ روڈ کے اطراف سربراہی آب کے موثر انتظامات

حیدرآباد کے بشمول آوٹر رنگ روڈ کے اطراف سربراہی آب کے موثر انتظامات

شہر میں پانی کا کوئی مسئلہ نہیں ، وزیر بلدی نظم و نسق کا کونسل میں جواب
حیدرآباد۔5۔جنوری (سیاست نیوز) حیدرآباد اور نواحی علاقو ںمیں پانی کی کوئی قلت نہیں ہے اور وافر مقدار میں پانی کی سربراہی عمل میںلائی جا رہی ہے۔ ریاستی وزیر بلدی نظم و نسق مسٹر کے ٹی راما راؤ نے قانون ساز کونسل میں وقفہ سوالات کے دوران یہ بات بتائی ۔ انہوں نے بتایا کہ ریاستی حکومت پینے کے پانی کی سربراہی کے بہترین اقدامات کو یقینی بنا رہی ہے اور ان اقدامات کے تحت حیدرآباد اور نواحی علاقو ںمیں پینے کے پانی کی سربراہی کے نظام کو بہتر بنایا جا رہا ہے۔ مسٹرکے تارک راما راؤ نے بتایا کہ ریاستی حکومت کی جانب سے حیدرآباد بالخصوص آؤٹر رنگ روڈ کے اطراف کے علاقوں میں پینے کے پانی کی مؤثر سربراہی کے انتظامات کئے ہیں ۔ریاستی وزیر بلدی نظم ونسق و انفارمیشن ٹکنالوجی نے بتایا کہ 4نومبر 2016کو حکومت نے جی او ایم ایس 262کی اجرائی کے ذریعہ حیدرآباد کے اطراف و اکناف کے علاقوں میں 190مواضعات کو پینے کا صاف پانی سربراہ کرنے کیلئے 1136کروڑ روپئے منظور کیئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ یہ ان علاقوں میں جہاں پینے کے پانی کی سربراہی کیلئے یہ رقومات منظور کی گئی ہیں وہ مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے حدود سے باہر ہیں لیکن آؤٹر رنگ روڈ کے اندرونی حصہ میں آتے ہیں اسی لئے تمام کام کی انجام دہی حیدرآباد میٹرو واٹر سپلائی اینڈ سیوریج بورڈ کی نگرانی میں انجام دی جائے گی۔مسٹر کے ٹی راما راؤ نے بتایا کہ شہر میں پینے کے پانی کی سربراہی کا کوئی مسئلہ نہیں ہے بلکہ وافر پانی کی سربراہی کے ساتھ سربراہی نظام کو بہتر بنانے کے اقدامات کئے جا رہے ہیں۔قائد اپوزیشن تلنگانہ قانون ساز کونسل جناب محمد علی شبیر ‘ مسٹرکے دامودر ریڈی اور مسٹر ایم رنگاریڈی نے حکومت سے استفسار کیا تھا کہ کیا واقعی شہر حیدرآباد اور اطراف کے علاقو ںمیں پینے کے پانی کی سربراہی میں مشکلات پیش آرہی ہیں یا پانی کی قلت کے سبب عوام کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔مسٹرکے ٹی راما راؤ نے ان سوالوں کے جواب میں کہا کہ ایسی کوئی شکایات نہیں ہے بلکہ حالیہ عرصہ میں پینے کے پانی کی سربراہی میں کافی بہتری پید ا ہوئی ہے اورفی الحال جاری ترقیاتی کاموں کے بعد پینے کے پانی کی سربراہی میں مزید بہتری پیدا ہونے کی توقع ہے۔

TOPPOPULARRECENT