Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / حیدرآبادمیں اسپیشل آدھار رجسٹریشن سنٹرس

حیدرآبادمیں اسپیشل آدھار رجسٹریشن سنٹرس

آدھار کارڈس کو الکٹورل کارڈس سے مربوط کرنے کے پراجکٹ میںسہولت کیلئے خصوصی اقدام
حیدرآباد۔23جولائی ( سیاست ڈاٹ کام)آدھار کارڈس کو رائے دہندوں کے شناختی کارڈس سے مربوط کرنے سے متعلق جاریہ پراجکٹ کے ایک حصہ کے طورپر گریٹرحیدرآباد میونسپل کارپوریشن نے یہ طئے کیا ہے کہ ان افراد کے رجسٹریشن کے لئے خصوصی انتظامات کئے جائیں جن کے پاس آدھار کارڈ نہیں ہیں۔ اسپیشل آفیسر و کمشنر جی ایچ ایم سی سومیش کمار جنہوںنے حیدرآبادمیں اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ اجلاس میں اس کام کی پیشرفت کا جائزہ لیا اور کہاکہ جی ایچ ایم سی کے تمام 18 سرکلس آفسس میں اسپیشل آدھار رجسٹریشن سنٹرس قائم کئے جائیںگے۔انہوںنے کہاکہ تاحال آدھار کارڈس کو الکٹورل فوٹوآئی ڈی کارڈس سے مربوط کرنے کا 36فیصد کام مکمل اور جی ایچ ایم سی کے حدود میں رہنے والے 73.69 لاکھ رائے دہندوں میں سے 25.79لاکھ رائے دہندوں کا احاطہ کرلیاگیا ہے۔ بوتھ لیول آفیسرس نے گھر گھر جاکرمعائنہ کرتے ہوئے 99.09 فیصد کام کی تکمیل کرلی ہے اور گھروں کے مقفل ہونے کے 16فیصد ‘ مقام رہائش کی تبدیلی کے 28فیصداورآدھار کارڈس نہ ہونے کے 16.67 فیصد کیسس کو ریکارڈ کیاہے۔ علاوہ ازیں 7.5000 افراد کی موت واقع ہوجانے کی نشاندہی کی گئی ہے۔ جی ایچ ایم سی کے بموجب جہاں تک گھروں کے مقفل ہونے کے کیسس کا تعلق ہے عہدیداروں کو ہدایات جاری کی گئی ہیں کہ وہ پڑوسیوں سے فون نمبرات حاصل کریں تاکہ ضروری کارروائی کی جاسکے۔ مقام رہائش کی تبدیلی کے کیسس میں ان مقامات پر موجودہ طورپر رہنے والوں کو نوٹسیں جاری کی گئی ہیں ۔ عہدیداروں سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ وہ آدھار کارڈس کو الکٹورل آئی ڈی کارڈس سے مربوط کرنے کے سلسلہ میں موجودہ بوتھ لیول آفیسرس ‘ سنیٹری فیلڈ اسسٹنٹس‘ بل کلکٹرس اور جی ایچ ایم سی کے دیگرملازمین کا تعاون حاصل کریں۔ الیکشن کمیشن کی ہدایات کی روشنی میں 25جولائی کو جی ایچ ایم سی کے ہیڈ آفس میں جائزہ اجلاس مقرر کیاگیا ہے اور تمام سرکل آفیسرس اور ڈپٹی کمشنرس کی جانب سے بھی ان کے متعلقہ سرکل دفاترمیں سیاسی جماعتوں کے ساتھ جائزہ اجلاس کا انعقاد عمل میں لایاجارہا ہے۔ سومیش کمار نے ان سے خواہش کی ہے کہ وہ آدھار کارڈس کو رائے دہندوں کے تصویری شناختی کارڈس سے مربوط کرنے کی تفصیلات جیسے گھروں کے مقفل ہونے اور مقام رہائش کی تبدیلی کے کیسس سے جلد از جلد سیاسی جماعتوں کو واقف کرائیں۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT