Tuesday , September 25 2018
Home / کھیل کی خبریں / حیدرآباد سے آ ج مقابلہ ،بنگلور پر اخراج کی تلوار

حیدرآباد سے آ ج مقابلہ ،بنگلور پر اخراج کی تلوار

بینگلورو۔16مئی (سیاست ڈاٹ کام) ویراٹ کوہلی کی رائل چیلنجرس بنگلورگھریلو میدان پر آئی پی ایل 11 کی سرفہرست ٹیم اور پلے آف کے لئے سب سے پہلے کوالیفائی کر چکی سن رائزر حیدرآباد کے خلاف ٹورنمنٹ میں اپنی امیدیں قائم رکھنے کے لئے کل یہاں کرو یا مرو کے میچ میں اترے گی۔حیدرآباد کی ٹیم نے 12 میچوں میں سے 9 جیتے اور تین ہارے ہیں وہ18 پوائنٹس کے ساتھ پہلے ہی ناک آؤٹ میں کوالیفائی کرچکی ہے اور اب باقی بچے میچوں کے نتائج اس کے لئے اپنا ٹاپ مقام بنائے رکھنے کے لئے ہی اہم ہیں جبکہ فہرست میں نچلے درجے کی ٹیموں کے لئے پلے آف میں پہنچنے کے لئے ہر میچ کرو یا مرو کا میچ ہوگیا ہے ۔کوہلی کی ٹیم بنگلور 12 میچوں میں سے پانچ ہی میں فتح حاصل کرسکی ہے اور وہ آٹھ ٹیموں میں ساتویں مقام پر ہے ۔ کل اگر بنگلور میں ٹیم اپنے گھریلو میدان پر کامیابی حاصل کرلیتی ہے تو وہ 12 پوائنٹ کے ساتھ اپنی امید قائم رکھے گی جبکہ راجستھان، پنجاب اور ممبئی بھی اس کے امکانات پر اثر ڈالیں گے ۔ بنگلورو کے لئے اب باقی دونوں میچ جیتنا لازمی ہے اور شکست کی صورت میں اس کا سفر پوری طرح ختم ہوجائے گا۔بنگلورو نے آخری کچھ میچوں میں رفتار پکڑی ہے اور پچھلے دو میچوں میں دہلی ڈیر ڈیولس سے پانچ وکٹ اور کنگس الیون پنجاب سے 10 وکٹ سے کامیابی حاصل کی ہے ۔ ٹیم فی الحال کنارے پر کھڑی ہے جہاں اس کے پاس کھونے کے لئے کچھ نہیں تو پانے کے لئے بہت کچھ ہے ۔ امید کی جاسکتی ہے کہ کوہلی کی ٹیم بلند حوصلوں کے ساتھ حیدر آباد کو شکست دینے کے لئے اپنا سارا دم خم لگادے گی۔بنگلورو کے پاس حیدرآباد کے خلاف گزشتہ میچ میں پانچ رنوں کی قریبی شکست کا حساب برابر کرنے کا موقع بھی رہے گا۔ وہیں اس سے میچ میں اپنی غلطیوں کا ابھی احساس ہوگا۔ بنگلورو کو حیدرآباد کی میزبانی میں پچھلا میچ صرف پانچ رن سے گنوانا پڑا تھا۔ بنگلوروکے بولروں نے جہاں میزبان ٹیم کو صرف146 رنز پر روک دیا تھا وہیں کوہلی، اے بی ڈی ویلئرس، پارتھیو پٹیل، معین علی، مندیپ سنگھ جیسے تجربہ کار بیٹسمینس چھوٹے نشانہ کو بھی حاصل نہیں کرسکے تھے ۔متوازن بیٹنگ اور بہتر تال میل کی بدولت فہرست میں پہلے مقام پر قابض حیدرآباد کی ٹیم جہاں خود اعتمادی سے لبریز ہے وہیں بنگلورو نے بھی پنجاب کے خلاف پچھلے میچ میں 10 وکٹ کی یکطرفہ جیت سے خود اعتمادی حاصل کرلی ہے ۔ کوہلی اور اے بی 514 رن اور358 رن بناکر ٹیم کے ٹاپ اسکورر ہیں اور ٹیم رنوں کے لئے ان پر ہی منحصر ہے ۔ مندیپ اور کالن ڈی گرینڈ ہومے مڈل اور لوور آرڈر پر اہم ثابت ہوسکتے ہیں۔ پنجاب کے خلاف کامیابی میں کوہلی (ناٹ آؤٹ 48) اور پارتھیو (ناٹ آؤٹ 48) نے کلیدی رول ادا کیا تھا اور حیدرآباد کی خطرناک بولنگ کے سامنے بنگلورو کو صبر سے بیٹنگ کرنے کی ضرورت ہوگی۔حیدرآباد نے ٹورنمنٹ میں چھوٹے اور بڑے ہدف کا سامنا کرکے ثابت کردیا ہے کہ اس کے پاس متوازن ٹیم ہے لیکن اس کی جیت میں ہمیشہ بولروں کا اہم کردار رہا ہے ۔ بنگلورو کے خلاف بھی راشد خان (13)ثاقب الحسن) (12 اور سدھارتھ کول (13) وکٹ اے بی اور کپتان کوہلی کو اپنے نشانے پر رکھیں گے ۔ پچھلے میچ میں تین وکٹ لیکر سب سے کامیاب رہنے والے فاسٹ بولر امیش یادو، محمد سراج ، یزویندر چہل، گرینڈ ہومے اور معین سے کپتان کوہلی کو پھر اسی کارکردگی کی امید رہے گی۔

TOPPOPULARRECENT