Saturday , November 18 2017
Home / شہر کی خبریں / خانگی اسکولس کے خامیوں کی نشاندہی، محکمہ تعلیمات سے اجازت ناموں کی جانچ

خانگی اسکولس کے خامیوں کی نشاندہی، محکمہ تعلیمات سے اجازت ناموں کی جانچ

بنیادی سہولتوں کا بھی جائزہ، غیر مسلمہ اسکولس کے خلاف کارروائی، سرکاری اسکولس ندارد
حیدرآباد۔15جنوری(سیاست نیوز) محکمہ تعلیم سرکاری اسکولوں میں معیار تعلیم کو بہتر بنانے سے زیادہ خانگی اسکولوں میں موجود خامیوں کی نشاندہی میں مصروف ہے۔ محکمہ تعلیم کی جانب سے خانگی اسکولوں کو درکار اجازت ناموں کی از سر نو جانچ کی ہدایت دی گئی ہے تاکہ اس جانچ کے ذریعہ اس بات کا پتہ چلایا جا سکے کہ دونوں شہروں میں چلائے جانے والے خانگی اسکولوں میں موجود سہولیات اور ان سہولتوں کے متعلق سرکاری اجازت ناموں کے متعلق محکمہ تعلیم نے تفصیلات اکٹھا کرنے کا کام شروع کردیا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ نئی تعلیمی پالیسی کو عملی جامہ پہنانے کی غرض سے کئے جانے والے ان اقدامات کے تحت محکمہ تعلیم کی جانب سے تمام اسکولوں کی مکمل تفصیلات جمع کی جانے لگی ہیں اور ان اسکولوں کے خلاف کاروائی کا بھی منصوبہ تیار کیا جا رہا ہے جن کے پاس درکار اجازت نامہ موجود نہیں ہیں۔محکمہ تعلیم کے ذرائع کے بموجب دونوں شہروں میں چلائے جانے والے 50فیصد سے ز یادہ اسکولوں میں محکمہ فائر سیفٹی کے اجازت نامہ موجود نہیں ہیں اگر ان کے پاس اجازت نامہ ہے بھی تو ان اجازت ناموں کی صداقت کی جانچ کی جانی ناگزیر ہے کیونکہ بیشتر اجازت ناموں کے متعلق محکمہ تعلیم کے عہدیداروں کو شبہات ہیں اور ان کا ماننا ہے کہ محکمہ فائر کے عہدیداروں نے عمارتوں کا معائنہ کئے بغیر سرٹیفیکیٹ جاری کئے ہیں اسی لئے ان سرٹیفیکیٹس کی جانچ کی جائے گی ۔بتایا جاتا ہے کہ خانگی اسکولوں کو مسلمہ حیثیت کی فراہمی کیلئے جو اسناد کی ضرورت ہے ان اسناد کے متعلق محکمہ تعلیم کے عہدیداروں کو شبہات پیدا ہونے لگے ہیں کیونکہ جن امور کی تکمیل کی جانی ہے ان امور کی تکمیل کے بغیر ہی یہ اسناد جاری کئے جارہے ہیں ۔ عہدیداروں کا کہنا ہے کہ سرکاری محکمہ جات کی جانب سے اب تک جو طریقہ کار اختیار کیا گیا ہے اسے دیکھتے ہوئے یہ کہا جا سکتا ہے کہ ان امور میں کچھ حد تک بد عنوانیاں ہوئی ہیں لیکن موجودہ حکومت کی جانب سے محکمہ تعلیم میں تیز رفتار اصلاحات کے متعلق کئے جا رہے اقدامات کے تحت ہر ضلع میں تمام خانگی اسکولوں کی مسلمہ حیثیت کیلئے جاری کردہ اسناد کی از سر نو جانچ کیلئے علحدہ کمیٹی کی تشکیل کی منصوبہ بندی کی جا رہی ہے تاکہ اس بات کا پتہ چلایا جا سکے کہ خانگی اسکولو ںمیں مسلمہ حیثیت کے حصول کے لئے کتنے انتظامیہ متحمل ہیں اور کتنے ایسے انتظامیہ ہیں جو تمام قانونی امور اور شرائط کی تکمیل کر سکتے ہیں۔عہدیداروں کے مطابق اندرون دو ماہ تمام خانگی اسکولوں کی تفصیلات حاصل کرتے ہوئے حکومت کو پیش کردی جائیں گی تاکہ نئے تعلیمی سال کے آغاز سے قبل مکمل تفصیلات محکمہ تعلیم کے پاس موجود رہیں۔

TOPPOPULARRECENT