Tuesday , December 12 2017
Home / شہر کی خبریں / خواتین بل منظوری کیلئے ٹی آر ایس کی تائید پر زور

خواتین بل منظوری کیلئے ٹی آر ایس کی تائید پر زور

صدر تلنگانہ پی سی سی اتم کمار ریڈی کا بیان

حیدرآباد ۔ 23 ستمبر (سیاست نیوز) صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اتم کمار ریڈی نے ٹی آر ایس پر زور دیاکہ وہ صدر کانگریس سونیا گاندھی کی جانب سے لوک سبھا میں خواتین تحفظات کا بل منظور کرنے کا جو مطالبہ کیا ہے اس کی تائید کریں اور تلنگانہ کی کابینہ میں خواتین کو شامل کریں۔ آج گاندھی بھون میں مہیلا کانگریس کی صدر این شاردا کی جانب سے بتکماں تہوار کا اہتمام کیا گیا۔ اس موقع پر صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اتم کمار ریڈی، سابق ریاستی وزیر ایم ششی دھر ریڈی کے علاوہ دوسرے قائدین موجود تھے۔ اتم کمار ریڈی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس پارٹی خواتین کو خودمختار بنانے کے حق میں ہے اور ہر شعبہ میں خواتین کی حوصلہ افزائی کرنے میں پیش پیش رہی ہے۔ سیاست میں بھی تحفظات فراہم کرنے کی مکمل تائید کرتی ہے۔ آنجہانی راجیو گاندھی خواتین کی سیاست میں حصہ داری بڑھانے کیلئے پنچایت راج ایکٹ 1992ء میں ترمیم کرتے ہوئے مقامی اداروں میں خواتین کو 33 فیصد تحفظات فراہم کئے تھے۔ اپوزیشن جماعتوں نے 1989ء میں بل کی راجیہ سبھا میں مخالفت کی تھی۔ تاہم 1993ء کے دوران پارلیمنٹ کی دونوں ایوانوں میں بل کو منظور کرتے ہوئے دستور کی دفعہ 73 اور 74 میں ترمیم کی گئی اس بل سے سیاست میں خواتین کی حصہ داری بڑھانے کے معاملہ میں انقلابی کامیابی حاصل ہوئی ہے۔ یو پی اے حکومت نے سونیا گاندھی کی قیادت میں 9 مارچ 2010ء کو راجیہ سبھا میں خواتین تحفظات بل کو منظور کردیا تھا۔ تاہم لوک سبھا میں بل کی منظوری میں دوسری جماعتوں نے تائید نہیں کی اور کانگریس کو لوک سبھا میں مکمل اکثریت نہ ہونے کی وجہ سے بل منظور نہ ہوسکا۔ بی جے پی کو لوک سبھا میں مکمل اکثریت ہونے کے باوجود گذشتہ تین سال سے خواتین تحفظات بل کی منظوری میں ٹال مٹول کی پالیسی اپنائی جارہی ہے۔ صدر کانگریس مسز سونیا گاندھی نے وزیراعظم نریندر مودی کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے خواتین تحفظات بل منظور کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اتم کمار ریڈی نے بتایا کہ لوک سبھا کے جملہ 543 ارکان میں خواتین کی تعداد صرف 66 ہے جو 12 فیصد سے بھی کم نمائندگی ہے جبکہ ملک میں خواتین کی 48.5 فیصد آبادی ہے۔ عالمی سطح پر خواتین ارکان پارلیمنٹ کی تعداد 22.4 فیصد اور ہندوستان 12 فیصد تناسب کے ساتھ دنیا کے 140 ممالک کی فہرست میں 103 مقام رکھتا ہے۔ ایشیاء کے 18 ممالک میں ہندوستان کا 13 واں مقام ہے۔ تلنگانہ کی اسٹیٹ اسمبلی میں بھی خواتین کی صرف 9 فیصد نمائندگی ہے۔ خواتین کو 33 فیصد تحفظات فراہم کرنے سے ایوانوں میں خود بہ خود ان کی نمائندگی بڑھ جائے گی۔

 

TOPPOPULARRECENT