Monday , July 16 2018
Home / Top Stories / خواتین کیخلاف جرائم پر کانگریس کا منگل کو یوم سیاہ

خواتین کیخلاف جرائم پر کانگریس کا منگل کو یوم سیاہ

 

لکھنؤ ۔ /12 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی اور یوگی حکومت پر اپنے حملے میں شدت پیدا کرتے ہوئے کانگریس نے آج فیصلہ کیا کہ ملک بھر میں خواتین کے خلاف بڑھتے ہوئے جرائم پر بطور احتجاج منگل /17 اپریل کو یوم سیاہ منایا جائے گا ۔ صدر آل انڈیا مہیلا کانگریس سشمیتا دیو نے کہا کہ یو پی کے ضلع اناؤ میں کم عمر لڑکی کا معاملہ ہو یا کٹھوا (جموں) پیش آئے 8 سالہ لڑکی کی اجتماعی عصمت ریزی کی گھناؤنی حرکت ہو ، بی جے پی ملک بھر میں خواتین کو اقل ترین سلامتی فراہم کرنے میں ناکام ہوگئی ہے ۔ خواتین کے خلاف جرائم کی شرح قومی سطح پر مسلسل بڑھتی جارہی ہے اور بی جے پی حکمرانی والی ریاستوں کے حالات ابتر ہیں ۔ چنانچہ کانگریس نے اس رجحان کے خلاف احتجاج کے طور پر /17 اپریل کو یوم سیاہ منانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ سشمیتا آج صبح لکھنؤ پہونچی تاکہ یوگی حکومت کے خلاف احتجاجی مارچ شروع کیا جاسکے ۔ یوگی حکومت نے اناؤ ریپ کیس میں ابتدائی طور پر بے عملی کا مظاہرہ کیا اور ملزم بی جے پی رکن اسمبلی کلدیپ سنگھ کو گرفتار کرنے سے یا اس کے خلاف ایف آئی آر تک درج کرنے سے گریز کیا ۔ جب اپوزیشن کا دباؤ بڑھ گیا تب حکومت نے مقدمہ درج کیا ہے ۔ لکھنؤ میں آج مخالف حکومت نعرے بلند کرتے ہوئے خواتین کی بریگیڈ نے سڑکوں پر اپنی چوڑیاں توڑدیں تاکہ لا اینڈ آرڈر کو کنٹرول کرنے میں سرکاری مشنری کی ناکامی پر اپنے غصے و ناراضگی کا اظہار کیا جاسکے ۔ پارٹی ورکرس نے پرچم لہراتے ہوئے مطالبہ کیا کہ ملزم بی جے پی رکن اسمبلی کلدیپ کو فوری گرفتار کیا جائے ۔ یو پی کانگریس کمیٹی اور یوتھ کانگریس کے ورکرس بھی اس احتجاج میں شامل ہوئے ۔ دو گھنٹے طویل مظاہرہ احتجاجیوں کی حراست کے ساتھ ختم ہوا ۔ سشمیتا نے کہا کہ عام انتخابات کے دوران مودی کی طرف سے یہ نعرہ بڑے زور و شور سے بلند کیا گیا کہ ’’بند کرو اب مہیلا پے اتیاچار …اب کی بار مودی سرکار‘‘ ۔ سشمیتا نے کہا کہ مودی جی کے وعدہ کا کیا ہوا ؟ کیا یوگی جی خواتین اور لڑکیوں کے ساتھ اس طرح کے طرز عمل پر یونہی خاموش رہیں گے ؟ آپ کی حرکتوں نے ثابت کردیا ہے کہ آپ کے وعدے ’ جملے‘ کے سوا کچھ نہیں ۔

اناؤ عصمت ریزی پر خاموشی ‘ مودی پر کانگریس کی تنقید
نئی دہلی 12 اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) اناؤ عصمت ریزی واقعہ پر خاموشی اختیار کرنے پر کانگریس نے آج وزیر اعظم نریندر مودی کو نشانہ بنایا اور سوال کیا کہ اب تک بی جے پی کے ملزم رکن اسمبلی کو کیوں گرفتار نہیں کیا گیا ہے ۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے سینئر کانگریس لیڈر کپل سبل نے الزام عائد کیا کہ نریندر مودی ملک میں خواتین کے خلاف ہونے والے جرائم کی روک تھام میں سنجیدہ نہیں ہیں۔ سبل نے مودی سے کہا کہ وہ ملک میں عصمت ریزی کے واقعات پر بھی بھوک ہڑتال کریں اور چیف منسٹر یو پی آدتیہ ناتھ کے خلاف احتجاج درج کروائیں۔ سبل نے کہا کہ نیشنل کرائم ریکارڈ بیورو کے مطابق بی جے پی کے اقتدار والی ریاستوں میں ہی خواتین کے خلاف جرائم سب سے زیادہ پیش آ رہے ہیں۔ اترپردیش میں پولیس نے آج رکن اسمبلی بی جے پی کلدیپ سنگھ سینگر کے خلاف مقدمہ درج کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ متاثرہ لڑکی نے خوف کی وجہ سے رکن اسمبلی کا نام پہلے نہیں لیا تھا ۔ اس وقت اسے گرفتار کیوں نہیں کیا گیا ؟ ۔ ہمارا یہ بھی الزام ہے کہ رکن اسمبلی کو اب بھی گرفتار نہیں کیا جائے گا ۔

 

اناؤ کیس : کئی مرکزی وزرا یوگی حکومت کے دفاع میں اترے
نئی دہلی 12 اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) کئی مرکزی وزرا نے اناؤ عصمت ریزی مقدمہ میں تنقیدوں کا سامنا کر رہی یو پی حکومت کے طریقہ کار کی مدافعت کی ہے اور کہا کہ حکومت خواتین کا تحفظ کرنے کی پابند ہے اور قانون اپنا کام کریگا ۔ بنگارمئوکے بی جے پی رکن اسمبلی کلدیپ سنگھ سینگر پر تعزیرات ہند کی مختلف دفعات بشمول عصمت ریزی ‘ اغوا اور دھمکانے کے الزامات عائد کئے گئے ہیں۔ ریاستی حکومت نے کیس کی سی بی آئی تحقیقات کروانے کا اعلان کیا ہے ۔ وزیر ثقافت مہیش شرما نے کہا کہ جب ہم بیٹی بچاؤ کہتے ہیں تو ہم اس پر عمل بھی کرتے ہیں۔ ہم یہاں اپنی بچیوں کی حفاظت کرنے آئے ہیں ۔ جہاں تک اناؤ واقعہ کا سوال ہے قانون اپنا کام کرے گا ۔ بہبودی خواتین و اطفال کی وزیر منیکا گاندھی نے کہا کہ خواتین کے خلاف اس طرح کے ہر مقدمہ میں کارروائی ہونی چاہئے ۔ انہوں نے کہا یہ افسوس ناک واقعہ ہے اور انصاف کیا جائیگ ۔ یہ کیس سی بی آئی کے سپرد کردیا گیا ہے اور قانون اپنا کام کرے گا ۔ وزیر ریلوے پیوش گوئل نے بھی آدتیہ ناتھ حکومت کی حمایت کی اور کہا کہ یو پی حکومت لا اینڈ آرڈر کی برقراری کیلئے مسلسل کام کر رہی ہے۔

 

اناؤ گینگ ریپ کیس :یو پی حکومت کو ہائیکورٹ کی سرزنش
لکھنؤ ۔ /12 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) الہ آباد ہائیکورٹ نے آج حکومت یو پی کو ایک نابالغ لڑکی کے گینگ ریپ کے خلاف کارروائی کرنے میں ایک سال کی تاخیر پر ڈانٹ پلائی اور انتباہ دیا کہ اسے ریاست میں لا اینڈ آرڈر کی صورتحال ناکام ہوجانے کی رولنگ دینے پر مجبور ہونا پڑسکتا ہے ۔ عدالت نے کہا کہ پولیس اس معاملے میں ایف آئی آر درج کرنے تیار نہ ہوئی ۔ ایس آئی ٹی رپورٹ کے باوجود حکومت مزید کارروائی سے گریزاں ہے ۔ اگر ریاست میں لا اینڈ آرڈر کی یہی صورتحال رہی تو ہمیں سخت رولنگ جاری کرنے پر مجبور ہونا پڑسکتا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT