Monday , September 24 2018
Home / شہر کی خبریں / خود روزگار اسکیم کے تحت 9 ہزار درخواستیں موصول

خود روزگار اسکیم کے تحت 9 ہزار درخواستیں موصول

حیدرآباد۔/4فروری، ( سیاست نیوز) اقلیتوں اور دیگر کمزور طبقات کیلئے حکومت کی اعلان کردہ خودروزگار اسکیم کے تحت ریاست بھر میں اقلیتوں کی جانب سے ابھی تک تقریباً 9000 درخواستیں آن لائن داخل کردی گئیں جبکہ اس اسکیم کے تحت اقلیتی فینانس کارپوریشن کے پاس سبسیڈی کی اجرائی کیلئے 22 ہزار استفادہ کنندگان کا نشانہ ہے۔ چونکہ حکومت نے اقلیتوں اور

حیدرآباد۔/4فروری، ( سیاست نیوز) اقلیتوں اور دیگر کمزور طبقات کیلئے حکومت کی اعلان کردہ خودروزگار اسکیم کے تحت ریاست بھر میں اقلیتوں کی جانب سے ابھی تک تقریباً 9000 درخواستیں آن لائن داخل کردی گئیں جبکہ اس اسکیم کے تحت اقلیتی فینانس کارپوریشن کے پاس سبسیڈی کی اجرائی کیلئے 22 ہزار استفادہ کنندگان کا نشانہ ہے۔ چونکہ حکومت نے اقلیتوں اور دیگر طبقات کے ترقیاتی کارپوریشنوں کو 15فروری تک درخواستوں کی وصولی کی اجازت دیدی ہے لہذا اس بات کا امکان ہے کہ اس اسکیم کیلئے مقرر کردہ کوٹہ کی باآسانی تکمیل ہوجائے گی۔ چیف سکریٹری ڈاکٹر پی کے موہنتی نے اقلیتی بہبود کے سکریٹری سید عمر جلیل اور دیگر عہدیداروں کے ساتھ اپنے اجلاس میں اس بات کی اجازت دی کہ اسکیم کے تحت درخواستوں کی وصولی کا سلسلہ جاری رکھا جائے۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن میں آج شام تک تقریباً 9ہزار درخواستیں آن لائن داخل کردی گئیں جبکہ 6ہزار درخواستیں تحریری طور پر کارپوریشن میں موجود ہیں جنہیں عہدیدار آن لائن کریں گے۔ ان میں 3ہزار درخواستیں سابقہ اسکیم کے تحت داخل کردہ افراد کی ہیں جو نئی اسکیم سے استفادہ کیلئے اہل قرار دیئے گئے ہیں جبکہ 3ہزار نئی درخواستیں ہیں جو گذشتہ چند دن میں داخل کی گئیں۔ ان درخواستوں کو آن لائن کرنے کیلئے اقلیتی فینانس کارپوریشن نے زائد اسٹاف کی خدمات حاصل کی ہیں۔

منیجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن پروفیسر ایس اے شکور نے بتایا کہ قرض کی منظوری کے سلسلہ میں بعض مقامات سے بینکوں کے عدم تعاون کی شکایات ملی ہیں جنہیں متعلقہ ضلع کلکٹرس سے رجوع کیا جارہا ہے۔ ضلع کلکٹرس بینکرس کمیٹی کے اجلاس میں ان بینکوں کو قرض کی اجرائی کا پابند کریں گے۔ انہوں نے بتایا کہ شہر اور اضلاع میں ہر بینک کیلئے قرض کی منظوری کا نشانہ مقرر کیا گیا ہے اور ہر برانچ کی ذمہ داری ہے کہ وہ شرائط کی تکمیل کرنے والے درخواست گذاروں کو قرض منظور کرے۔ انہوں نے بتایا کہ جن برانچس کا نشانہ مکمل نہیں ہوگا ان کے مابقی ٹارگٹ کو دیگر برانچس منتقل کردیا جائے گا جہاں پر زائد درخواستیں ہوں گی۔ اس سلسلہ میں ضلع کلکٹرس تین مرحلوں میں بینکرس کمیٹی کا اجلاس طلب کریں گے۔انہوں نے بتایاکہ حیدرآباد میں درخواستوں کے ادخال کیلئے راشن کارڈ اور انکم سرٹیفکیٹ لازمی ہے۔درخواست داخل کرنے کے بعد امیدوار بینک سے رجوع ہوکر شرائط کی تکمیل کے بعد قرض کی منظوری کا مکتوب حاصل کریں گے۔ تمام بینکس امیدواروں کی تفصیلات سے اقلیتی فینانس کارپوریشن کو واقف کرائیں گے اور اس فہرست کو منظوری کیلئے ضلع کلکٹر کے پاس روانہ کیا جائے گا۔ ضلع کلکٹرکی منظوری کے ساتھ ہی اقلیتی فینانس کارپوریشن سبسیڈی کی رقم جاری کردے گا تاہم بینک سے قرض کی رقم کی منتقلی تک امیدوار سبسیڈی کی رقم اکاؤنٹ سے حاصل نہیں کرپائے گا۔ آج داخل کردہ درخواستوں میں سب سے زیادہ درخواستیں ضلع اننت پور سے داخل کی گئیں جبکہ سریکاکلم سب سے پیچھے ہے۔پروفیسر ایس اے شکور نے اقلیتوں سے اپیل کی کہ وہ اس اسکیم سے استفادہ کیلئے آگے آئیں۔انہوں نے بتایا کہ اقلیتی فینانس کارپوریشن کے دفتر میں امیدواروں کی رہنمائی کیلئے خصوصی کاؤنٹر قائم کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT