Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / دائرۃ المعارف کے مرکزی پراجکٹ پر عمل کے لیے کمیٹیوں کی تشکیل

دائرۃ المعارف کے مرکزی پراجکٹ پر عمل کے لیے کمیٹیوں کی تشکیل

نگران پراجکٹ کمیٹی چیرمین چیف سکریٹری ، سید عمر جلیل کا اعلان
حیدرآباد ۔ 8 ۔  فروری  (سیاست نیوز)  دائرۃ المعارف کیلئے مرکزی حکومت کی جانب سے منظور کئے گئے پراجکٹ کی تکمیل کیلئے محکمہ اقلیتی بہبود نے دو علحدہ کمیٹیاں تشکیل دی ہیں۔ مرکز کی ہماری دھروہر اسکیم کے تحت وزارت اقلیتی امور میں دائرۃ المعارف عثمانیہ یونیورسٹی کیلئے 34 کروڑ 66 لاکھ روپئے پر مبنی پراجکٹ کو منظوری دی ہے تاکہ دائرۃ المعارف میں نادر کتابوں کا ترجمہ اور ان کا تحفظ کیا جاسکے۔ مرکز نے پہلی قسط کے طور پر تین کروڑ روپئے جاری کردیئے ہیں۔ سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل نے پراجکٹ پر عمل آوری کیلئے دو کمیٹیوں کی تشکیل کا اعلان کیا ہے ۔ پراجکٹ کی نگرانکار کمیٹی کے صدرنشین تلنگانہ کے چیف سکریٹری ہوں گے جبکہ ارکان میںسکریٹری لاء ڈپارٹمنٹ ، سکریٹری فینانس ، سکریٹری تعلیم ، سکریٹری انفارمیشن ٹکنالوجی ، انسپکٹر جنرل و کمشنر پرنٹنگ و اسٹیشنری ، دو ماہرین شامل رہیں گے ۔ سکریٹری اقلیتی بہبود کمیٹی کے کنوینر ہوں گے۔ پراجکٹ پر عمل آوری کیلئے تشکیل دی گئی کمیٹی کے صدرنشین ڈائرکٹر دائرۃ المعارف ہوں گے جبکہ ارکان میں فینانس آفیسر عثمانیہ یونیورسٹی ، ڈائرکٹر انفراسٹرکچر عثمانیہ یونیورسٹی ، سپرنٹنڈنگ انجنیئر عثمانیہ یونیورسٹی، ڈائرکٹر لیگل سیل عثمانیہ یونیورسٹی ، صدر شعبہ عربی ، ڈین اسکول آف عربک اینڈ ایشین اسٹڈیز ایفلو ، ڈاکٹر سید علیم اشرف جائیسی اسوسی ایٹ پروفیسر مانو، پروفیسر صدیق علی سابق ہیڈ آف دی ڈپارٹمنٹ عثمانیہ یونیورسٹی ، پروفیسر کے وینکٹ ریڈی ، مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن، ڈپٹی سکریٹری اقلیتی بہبود اور انفارمیشن ٹکنالوجی ڈپارٹمنٹ کے ایک نمائندہ کو شامل کیا گیا ہے ۔ پراجکٹ پر پانچ مرحلوں میں عمل آوری کی جائے گی جس کے تحت 240 قدیم اور نادر کتابوں کا انگریزی میں ترجمہ کیا جائے گا ۔ اس کے علاوہ انہیں دوبارہ آفسیٹ پر شائع کیا جائے گا ۔ اس کام کی تکمیل کیلئے ریاستی حکومت بھی اپنا حصہ ادا کرے گی۔ پراجکٹ کی مجموعی رقم میں 34 کروڑ 66 لاکھ 24 ہزار روپئے مرکزی حکومت ادا کرے گی، جس میں ڈیجیٹلائیزیشن آف مینواسکرپٹ اور کتابوں کی اشاعت کیلئے ایک کروڑ 38 لاکھ 24 ہزار روپئے خرچ کئے جائیں گے جبکہ عربی کتابوں کے انگریزی میں ترجمہ پر 26 کروڑ 40 لاکھ اور آفسیٹ پر دوبارہ اشاعت کیلئے 6 کروڑ 88 لاکھ روپئے خرچ کئے جائیں گے۔ ریاستی حکومت انفراسٹرکچر سہولتوں کیلئے تین کروڑ 5 لاکھ 59 ہزار روپئے ادا کرے گی۔ واضح رہے کہ مرکزی حکومت کی جانب سے پراجکٹ کی منظوری کے بعد کمیٹیوں کی تشکیل میں تاخیر کے سبب پراجکٹ کے آغاز میں دیری ہوئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT