Monday , December 18 2017
Home / ہندوستان / داعش کی سرگرمیاں اسلامی تعلیمات کے مغائر

داعش کی سرگرمیاں اسلامی تعلیمات کے مغائر

ہندوستانی نوجوانوں کو دہشت گرد گروپ سے دور رہنے علماء کا فتویٰ

لکھنؤ ۔ 9 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) دارالعلوم فرنگی محل نے فتویٰ جاری کرتے ہوئے دولت اسلامیہ (داعش) کی سرگرمیوں کی مذمت کی اور اس کے خلاف فتویٰ جاری کیا کہ یہ تنظیم غیر اسلامی ہیں اور اس کی سرگرمیاں بھی غیراسلامی ہیں۔ دارالعلوم فرنگی محل نے ہندوستانی نوجوانوں کو خبردار کیا کہ وہ اس خطرناک دہشت گرد تنظیم کے جال میں نہ پھنسیں۔ دارالعلوم فرنگی محل نے ایک شہری ساجد عمر جیلانی سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں فتویٰ دیتے ہوئے کہا کہ دولت اسلامیہ کی کارروائیاں غیراسلامی ہیں۔ اس شہری نے سوال کیا تھا کہ کشمیر میں بعض افراد کو آئی ایس آئی ایس کے جھانسے میں آ کر مہم چلاتے ہوئے دیکھا گیا ہے ۔ وہ یہ جاننا چاہتے ہیں کہ آیا دولت اسلامیہ کی سرگرمیاں اسلامی نقطہ نظر سے درست ہیں۔ ایسے میں اس نوجوان کو کیا کیا جانا چاہئے۔ فتویٰ میں دولت اسلامیہ کی سرگرمیوں کو اسلامی تعلیمات کے مغائر بتایا گیا ہے۔ مولانا خالد رشید فرنگی محلی نے یہ فتویٰ جاری کیا۔ ان کا کہنا ہیکہ اسلام کسی بھی بے گناہ کے قتل کی اجازت نہیں دیتا۔ اللہ نے قرآن مجید میں واضح کہا ہیکہ بلاوجہ کسی بھی شخص کا قتل انسانیت کے خلاف ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ دولت اسلامیہ ظلم و زیادتی اور بربریت انگیز کارروائیوں میں ملوث ہیں۔ اسلام کے نام پر یہ تنظیم غیراسلامی کارروائیاں کررہی ہیں۔ ہمارے فتویٰ کے ذریعہ نوجوانوں کو خبردار کیا جاتا ہیکہ وہ داعش کے جھانسے میں نہ آئیں۔ اگر وہ سوچتے ہیں کہ داعش میں شامل ہونے سے اللہ تعالیٰ انہیں جنت نصیب کرے گا تو وہ غلط ہے۔ جنت صرف انہیں ملے گی جو اللہ پر بھروسہ کرتے ہیں اور انسانیت کی خدمت کرتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT