Tuesday , September 18 2018
Home / عرب دنیا / داعش کے زیر قبضہ تکریت میں عراقی فورسس داخل

داعش کے زیر قبضہ تکریت میں عراقی فورسس داخل

بغداد۔ 11 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) عراقی سپاہی اور ملک کے اکثریتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے جنگجوں چھاپہ مار آج اسلامک اسٹیٹ (داعش ) کے زیر قبضہ شہر تکریت میں داخل ہوگئے۔ انتہا پسندی کے ایک طاقتور گڑھ پر قبضہ حاصل کرنا عراقی فورسس کیلئے ایک سخت امتحان سمجھا جارہا ہے۔ اتحادی عراقی فورسس قادسیہ کے رابطہ سے تکریت میں داخل ہوئے جہاں حکام نے ا

بغداد۔ 11 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) عراقی سپاہی اور ملک کے اکثریتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے جنگجوں چھاپہ مار آج اسلامک اسٹیٹ (داعش ) کے زیر قبضہ شہر تکریت میں داخل ہوگئے۔ انتہا پسندی کے ایک طاقتور گڑھ پر قبضہ حاصل کرنا عراقی فورسس کیلئے ایک سخت امتحان سمجھا جارہا ہے۔ اتحادی عراقی فورسس قادسیہ کے رابطہ سے تکریت میں داخل ہوئے جہاں حکام نے انہیں تازہ رسد اور کمک پہنچائی۔ صوبہ صلاح الدین کے بریگیڈیئر قیوم رشید نے کہا کہ ’’دہشت گرد اب عام شہریوں کے موٹر کارس چھینتے ہوئے تکریت سے فرار ہونے کی کوشش کر رہے ہیں اور وہ اب اس شہر سے باہر نکلنا چاہتے ہیں‘‘۔ تاہم فوری طور پر یہ واضح نہیں ہوسکا کہ آیا سپاہیوں اور جنگجوؤں کو اس شہر میں داعش کے انتہا پسندوں سے کسی مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ صوبہ صلاح الدین کے ایک مقامی عہدیدارنے بھی براہ قادسیہ ، تکریت میں فوج اور چھاپہ ماروں کے داخلہ کی توثیق کی۔ اس دوران اسوسی ایٹیڈ پریس کو دستیاب ایک ویڈیو میں عراقی فورسس اور جنگجوؤں کو ہموی کاروں پر عراقی فوج اور عراقی اکثریتی طبقہ کے مذہبی پرچم لہراتے ہوئے دکھایا گیا ہے اور کاروں کا یہ قافلہ شمالی علاقوں کی سمت پیش قدمی کر رہا تھا۔ عراق اور شام کے تقر یباً ایک تہائی حصہ پر داعش کا قبضہ ہے اور وہ اپنی خود ساختہ خلافت کا اعلان کر رہے ہیں۔ صوبہ صلاح الدین کے دارالحکومت تکریت کا شمار بھی داعش کے طاقتور گڑھ میں ہوتا ہے۔ جس پر عراقی فورسس کو دوبارہ قبضہ کی صورت میں موصل کی بازیابی میں مدد حاصل ہوسکتی ہے۔

TOPPOPULARRECENT