Monday , June 25 2018
Home / شہر کی خبریں / درگاہ حضرت سید شاہ موسیٰ قادریؒ فن تعمیر کی شاہکار عمارت

درگاہ حضرت سید شاہ موسیٰ قادریؒ فن تعمیر کی شاہکار عمارت

حیدرآباد ۔ 8 ۔ جنوری : ( نمائندہ خصوصی) : پرانا پل کے بالکل قریب حسینی علم کے راستہ پر قطب شاہی دور کے بزرگ اور اللہ کے ولی حضرت سید شاہ موسیٰ قادری کی درگاہ ہے ۔ ویسے تو ہمارے شہر میں بے شمار درگاہیں اور آستانے ہیں اور ان میں کئی ایک فن تعمیر کی شاہکار کہلانے کی مستحق ہے لیکن درگاہ حضرت سید شاہ موسیٰ قادریؒ کی بات ہی کچھ اور ہے ۔ حضرت کی مزار پر جو گنبد تعمیر کی گئی وہ دیکھنے سے تعلق رکھتی ہے ۔ ماہرین تعمیرات اسے فن تعمیر کی شاہکار عمارت کہتے ہیں اور یہ حقیقت بھی ہے ۔ اس گنبد کو انٹیک ایوارڈ بھی حاصل ہوا ہے ۔ اس کے علاوہ اسے حیدرآباد کے تاریحی و تہذیبی ورثہ میں شمار کیا جاتا ہے ۔ واضح رہے کہ انٹیک ہیرٹیج ایوارڈس اسکیم کا 1995 میں آغاز کیا گیا تھا تاکہ شہر اور اس کے اطراف و اکناف کی تاریخی ورثہ کا تحفظ کیا جائے ۔ اس اسکیم کے تحت تاحال تہذیبی ورثہ کی حامل 100 سے زائد عمارتوں کے نگران کار اداروں اور افراد کو ہیرٹیج ایوارڈس دئیے جاچکے ہیں ۔ 2012 میں اس ایوارڈ کے لیے 150 نامزدگیاں وصول ہوئی تھیں ۔ جن میں سے 24 کے انتخاب کے بعد صرف 6 عمارتوں کو ایوارڈ کے لیے منتخب کیا گیا ۔ آپ کو بتادیں کہ حضرت سید موسیٰ قادری کی ولادت باسعادت 1152 ھ میں ہوئی اور آپ کی قیام گاہ مستعد پورہ میں تھی ۔ 19 سال کی عمر میں آپؒ کو مسند سجادگی پر بٹھایا گیا اور پھر 19 سال کی عمر سے 63 سال کی عمر تک وہ ریاضت مجاہدات میں مشغول رہے ۔ موسیٰ ندی ، موسیٰ پیٹ ، موسیٰ باولی وغیرہ آپ سے ہی موسوم ہے ۔ 1215 ھ میں آپ کا وصال ہوا ۔ مکہ مسجد میں نماز جنازہ کی ادائیگی کے بعد والد بزرگوار کے روضہ میں سپرد لحد کیا گیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT