Monday , January 22 2018
Home / ہندوستان / دستور کی دفعہ 370 پر مباحث میں کوئی نقصان نہیں

دستور کی دفعہ 370 پر مباحث میں کوئی نقصان نہیں

مرکزی وزیر کا بیان ، یکساں سیول کوڈ کا بھی تذکرہ، وزارت کے پروگرام کی وضاحت

مرکزی وزیر کا بیان ، یکساں سیول کوڈ کا بھی تذکرہ، وزارت کے پروگرام کی وضاحت
دہرہ دون 30 مئی (سیاست ڈاٹ کام) دستور کی دفعہ 370 کے بارے میں پیدا ہونے والے تنازعہ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے مرکزی وزیر رادھا موہن سنگھ نے آج کہاکہ دستور کی دفعہ 370 اور یکساں سیول کوڈ پر کھل کر مباحث ہونے چاہئیں۔ آخر کسی کو بھی اِن کے حسن و قبح کی جانچ کرنے سے شرمانا کیوں چاہئے؟ اُنھوں نے اپنی اوّلین پریس کانفرنس کے دوران ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے یہ تبصرہ کیا۔ اپنی وزارت زراعت کے بارے میں پروگرام کی وضاحت کرتے ہوئے اُنھوں نے کہاکہ وہ اِس وزارت کے لئے نئے ہیں لیکن ترجیحات کا تعین کیا جاچکا ہے، جس میں دودھ کی پیداوار میں اضافہ، ملک گیر سطح پر 100 فیصد زرعی اراضی کی آبپاشی اور زرعی آمدنی انشورنس اسکیم کا آغاز شامل ہیں۔ تاکہ زراعت کا پیشہ معاشی اعتبار سے پائیدار بن سکے۔

اُنھوں نے کہاکہ وزارت زراعت سے خواہش کی گئی تھی کہ ایک لائحہ عمل تیار کرے تاکہ دودھ کی پیداوار میں اضافہ ہوسکے۔ اِس کے لئے ملک میں گائیوں کی افزائش میں اضافہ ضروری ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ ہم دنیا بھر میں دودھ کی پیداوار کے اضافہ کے لحاظ سے سب سے آگے تھے۔ واجپائی حکومت کے دور میں ہمارا یہی موقف تھا لیکن گزشتہ چند سال میں دودھ کی پیداوار متاثر ہوگئی۔ ہمارا سابق موقف برقرار نہیں رہا۔ یہی وجہ ہے کہ وہ اپنی وزارت کے عہدیداروں کو ہدایت دے رہے ہیں کہ ملک بھر میں گائیوں کی افزائش میں اضافہ کے اقدامات کئے جائیں۔ اُنھوں نے کہاکہ وزیراعظم گرام سینچائی یوجنا متعارف کروانے کا بھی منصوبہ ہے جو پی ایم جی ایس وائی کے خطوط پر ہوگی اور اِس سے ملک گیر سطح پر زرعی اراضی کی آبپاشی ممکن ہوسکے گی۔

TOPPOPULARRECENT