Thursday , November 23 2017
Home / Top Stories / دلتوں سے متعلق متنازعہ ریمارک سے وی کے سنگھ کی گھٹیا ذہنیت آشکار

دلتوں سے متعلق متنازعہ ریمارک سے وی کے سنگھ کی گھٹیا ذہنیت آشکار

مرکزی کابینہ سے فی الفور برطرفی اور جیل بھیج دینے بی ایس پی سربراہ مایاوتی کا مطالبہ

لکھنؤ۔/23اکٹوبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) بہوجن سماج پارٹی سربراہ مایاوتی نے آج فرید آباد میں دلتوں کی ہلاکت پر متنازعہ ریمارک کرنے والے مرکزی وزیر وی کے سنگھ کی فی الفور برطرفی اور انہیں جیل بھیج دینے کا مطالبہ کیا اور انہیں ایک حقیر اور پسماندہ ذہنیت کا آدمی قرار دیا۔ مایاوتی نے آج یہاں عجلت میں طلب کردہ ایک پریس کانفرنس میں مرکزی وزیر کے خلاف شدید غم و غصہ کا اظہار کیا جنہوں نے کہا تھا کہ اگر کوئی کتے پر پتھر مارتا ہے تو حکومت ذمہ دار نہیں ہوسکتی۔ بی ایس پی ربراہ نے کہا کہ یہ متنازعہ ریمارک ملک بھر میں دلتوں کی عزت اور وقار کے خلاف ہے، ہماری پارٹی نہ صرف اس کی مذمت کرتی ہے بلکہ وزیر اعظم نریندر مودی سے مطالبہ کرتی ہے کہ اس طرح کی گھٹیا ذہنیت اور حقیر آدمی کو کابینہ سے فی الفور برطرف کرتے ہوئے جیل بھیج دیں۔ انہوں نے بتایا کہ اگر نریندر مودی ایسا نہیں کریں گے تو یہ تصور کیا جائے گا کہ دلتوں کی عزت اور وقار سے انہیں کوئی سروکار نہیں ہے اور امبیڈکر کی یادگار کی تعمیر کے حالیہ اعلان کا مقصد دلتوں کے ووٹ حاصل کرنا ہے۔ سابق چیف منسٹر اتر پردیش نے یہ الزام عائد کیا کہ ہریانہ میں بی جے پی حکومت دلتوں کی حفاطت میں ناکام اور بے حس ہوگئی ہے اور فریدآباد میں 2دلت بچوں کو زندہ جلادینے کے واقعہ کو شرمناک قرار دیا ۔ انہوں نے کہا کہ یہ واقعہ انتہائی صدمہ انگیز ہے کیونکہ پولیس کی موجودگی میں یہ انجام دیا گیا ہے۔ مایاوتی نے بتایا کہ ایک طرف نریندر مودی ڈاکٹر امبیڈکر کے احترام اور اعزاز کی بات کرتے ہیں دوسری طرف امبیڈکر کے پرستاروں کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتیں حقیر مفادات کیلئے امبیڈکر کا نام استعمال کررہی ہیں اور دلتوں کی حفاظت میں ناکامی پر چیف منسٹر ہریانہ سے استعفی کا مطالبہ کیا اور بتایا کہ ملزمین کے خلاف حکومت ہریانہ کو سخت کارروائی کرنا چاہیئے۔ محض پولیس ملازمین کی معطلی سے کوئی مقصد حاصل نہیں ہوگا بلکہ قصور واروں کو جیل بھیج دیا جائے۔ انہوں نے مذکورہ واقعہ کے بعد فرید آباد کا دورہ کرنے والے مختلف لیڈروں بالخصوص کانگریس قائد راہول گاندھی کو تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نے بتایا کہ ہر یانہ میں جب کانگریس برسراقتدار تھی اسوقت بھی اس طرح کا ایک واقعہ پیش آیا تھا لیکن اب مرکز اور ہریانہ میں اقتدار سے محروم ہوجانے کے بعد کانگریس یوراج مگرمچھ کے آنسو بہارہے ہیں جبکہ حکمرانی کے وقت وہ کمبھ کرن کی طرح گہری نیند میں تھے۔ بی ایس پی لیڈر نے کہا کہ جب کانگریس اقتدار میں تھی تو بی جے پی ڈرامہ کررہی تھی اور اب بی جے پی برسراقتدار ہے تو کانگریس ڈرامہ کررہی ہے جس کی سزا انہیں بہار کے انتخابات میں بھگتنی پڑے گی۔ انہوں نے بتایا کہ دادری واقعہ کے ذمہ دار افراد کھلے عام بیانات دے رہے ہیں لیکن ان  کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی گئی ۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ انتخابات میں سیاسی مفادات حاصل کرنے کیلئے ہندوؤں اور مسلمانوں میں خلیج پیدا کرنے بی جے پی اور سماجوادی پارٹی آپس میں متحد ہوگئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT