Thursday , April 26 2018
Home / سیاسیات / دلت طالب علم کا قتل، بی جے پی حکومت میں عجب نہیں :مایاوتی

دلت طالب علم کا قتل، بی جے پی حکومت میں عجب نہیں :مایاوتی

لکھنؤ، 12 فروری (سیاست ڈاٹ کام ) صدر بہوجن سماج پارٹی مایاوتی نے اترپردیش میں قانون و انتظام کے پوری طرح ناکام ہوجانے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی(بی جے پی ) کی حکومت میں الہ آباد میں دلت طالب علم کا قتل کوئی نیا واقعہ نہیں ہے ۔ مایاوتی نے آج یہاں جاری بیان میں کہا کہ بی جے پی کے اقتدار کے دوران ریاست میں قانون و انتظام کی صورت حال تباہ ہوچکی ہے ۔ الہ آباد میں دلت طالب علم کا بہیمانہ قتل بی جے پی حکومت میں کوئی پہلا واقعہ نہیں ہے ۔ ایسے دردناک واقعات مسلسل ہورہے ہیں۔ اس کے لئے بی جے پی کی تنگ نظر، ذات پات پر مبنی اور منافرت کی سیاست پوری طرح سے ذمہ دار ہے ۔ اترپردیش میں ہی نہیں پورے ملک میں لاقانونیت کا ماحول ہے ۔ سماج کے پڑھے لکھے نوجوانوں کو روزگار نہیں مل پارہا ہے جس کی وجہ سے وہ مایوسی کاشکار ہیں ۔ جرائم بڑھ رہے ہیں اور سماج کا تانا بانا بکھر رہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ محروم اور استحصال کا شکار دلت سماج میں آزادی کے ستر سال بعد بھی اعلی تعلیم برائے نام ہے ۔ ایک ہونہار ایل ایل بی طالب علم کا قتل پورے سماج کے لئے نہایت افسوس اور تشویش کی بات ہے ۔ اس سے پورے سماج کو تکلیف پہونچی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت کو قصورواروں کو سخت سزا دلانے کے ساتھ ہی متاثرہ خاندان کی مدد بھی کرنی چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT