Tuesday , October 23 2018
Home / کھیل کی خبریں / دمیتروف نے اپنے کیریئر کا سب سے بڑا خطاب جیت لیا

دمیتروف نے اپنے کیریئر کا سب سے بڑا خطاب جیت لیا


لندن۔ 20نومبر (سیاست ڈاٹ کام) بلغاریہ کے گریگور دمیتروف نے ڈیوڈ گوفن کو 5۔7، 6۔4، 3۔6 کی سخت جدوجہدسے شکست دے کر اے ٹی پی ورلڈ ٹور فائنل ٹینس ٹورنامینٹ کا خطاب جیت لیا جو ان کے کیریئر کا سب سے بڑا خطاب بھی ہے ۔ 26 سالہ دمیتروف نے افتتاحی دونوں گیم ہارنے کے بعد اچھی واپسی کی ۔ ڈھائی گھنٹے تک چلے مقابلے میں گوفن سے سخت مقابلہ ہوا جنہوں نے چار میچ پوائنٹ بچاتے ہوئے جیتنے کی ہر ممکن کوشش کی ۔ دمیتروف نے لندن کے اوٹو ایرینا میں زبردست کھیل کا مظاہرہ کیا اورناقابل شکست بھی رہے ۔ بلغاریہ کے کھلاڑی کو اس فتح سے 1500 اے ٹی پی پوائنٹ کے ساتھ 25 لاکھ ڈالر کی انعامی رقم بھی حاصل ہوئی ہے اور اسکے ساتھ ہی وہ سال کا اختتام اب دنیا کے تیسرے نمبر کے کھلاڑی کے طور پر کریں گے ۔وہ عظیم کھلاڑیوں ر افیل نڈال اور روجر فیڈرر کے ساتھ درجہ بندی میں صرف ایک قدم پیچھے ہیں۔ اس سال کے آخری اور سب سے نمایاں ٹورنامینٹ جیتنے والے دمیتروف سرفہرست آٹھ کھلاڑیوں کے اس ٹورنامینٹ میں پہلی مرتبہ کوالیفائی کرتے ہوئے اسے پہلی ہی بار میں جیتنے والے 1998کے بعد پہلے کھلاڑی ہیں ۔اس سے قبل اسپین کے الیکس کوریجا نے ہمو طن کارلوس مویا کو شکست دے کر پہلی بار میں ہی اے ٹی پی فائنل جیتا تھا۔دمیتروف نے کہا ” میرے لئے یہ فخر کی بات ہے اور یہ پورا ہفتہ میرے لئے خاص رہا ہے ”۔ وہ جیتنے کے ایک گھنٹے بعد بھی آٹوگراف دینے کے لیے کورٹ پر ہی رہے ۔ ان کی حوصلہ افزائی کے لیے بڑی تعداد میں ان کے پرستار لندن پہنچے تھے ۔ بیلجیئم کے ڈیوڈ گوفن بھی اے ٹی پی فائنل کے لئے کوالیفائی کرنے والے پہلے کھلاڑی ہیں اور وہ اپنے کیرئر کی ساتویں درجہ بندی کے ساتھ اس سال کا اختتام کریں گے ۔وہ اے ٹی پی فائنل میں رافیل نڈال اور راجر فیڈرر دونوں کو شکست دینے والے اوورآل چھٹے کھلاڑی بھی بن گئے ہیں۔منتظمین نے بتایا کہ اوٹو ایرینا کے فائنل کے لیے زیادہ تر شائقین نے یہ سوچ کر ٹکٹ بک کرائے تھے کہ انہیں فیڈرر اور نڈال کو فائنل میں دیکھنے کا موقع ملے گا لیکن خطابی مقابلہ دونوں ہی نئے کھلاڑیوں کے درمیان ہوا جو دلچسپ ہونے کے ساتھ ٹورنامنٹ کا سب سے طویل فائنل بھی تھا۔

TOPPOPULARRECENT