Sunday , September 23 2018
Home / اضلاع کی خبریں / دنیا میں قیام امن کیلئے اسلامی تعلیمات پر عمل آوری ناگزیر

دنیا میں قیام امن کیلئے اسلامی تعلیمات پر عمل آوری ناگزیر

بیدر میں جماعت اسلامی کا اجتماع، جناب سید جمیل احمد ہاشمی اور دیگر کا خطاب

بیدر میں جماعت اسلامی کا اجتماع، جناب سید جمیل احمد ہاشمی اور دیگر کا خطاب

منااکھیلی؍25مئی (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)سورۃ النجم ایک ایسی سورت ہے جس میں آیتِ سجدہ نازل ہوئی ۔ آیت سجدہ پر پہنچ کر جیسے ہی اللہ کے رسول ﷺ نے سجدہ کیا تمام مسلمانوں کے ساتھ قرآن سن رہے مکہ کے کافر قرآن کی تاثیر کے زیراثر سجدہ میں گرگئے۔ اس سورت میںدراصل باطل سفارش پر تنقید کی گئی ہے۔ یہ بات محمد معظم امیرمقامی جماعت اسلامی ہند بیدر نے کہی۔ وہ مسجد ابراھیم ؑ موقوعہ چیتہ خانہ مین روڈ بیدر میں جماعت اسلامی ہند بیدر کے ہفتہ واری اجتماع میں سورۃ النجم کی ابتدائی 18آیات کا درس دے رہے تھے۔انھوں نے آگے بتایاکہ قرآن گواہی دے رہاہے کہ حضرت جبرئیل علیہ السلام جو باتیں پیش کررہے ہیں اس میں کوئی ملاوٹ نہیں ہے۔ کسی جن اور شیطان کی جرأت نہیں کہ جبرئیل علیہ السلام کے وحی لانے میں مداخلت کرسکے۔جناب سید جمیل احمد ہاشمی نے ’’موجودہ سماجی بگاڑ اور معراج کاپیغام ‘‘ عنوان پر تقریر کرنے سے قبل بتایاکہ یہ تقریر جناب محمد ظفراللہ خان کے ذمہ تھی ، اتفاق سے وہ رخصت پررہنے سے انھیں زحمت دی گئی ہے۔ موصو ف نے اپنے عنوان سے متعلق بتایاکہ جب سے دنیا بنی ہے انسان کو اللہ تعالیٰ نے ایسے ہی نہیں چھوڑ دیا۔ پہلے دن سے پیغمبروں کوبھیج کر انسانوں کی رہنمائی کی گئی وہ اس لئے کہ اللہ نہیں چاہتا کہ دنیا میں فساد برپا ہو۔بلکہ دنیا جنت نشان بنی رہے اور ایسا ہی ہوا۔ موصوف نے بتایاکہ دنیاکا موجودہ بگاڑ نیا نہیں ہے۔ دنیا میں امن وامان قائم کرنے کے لئے کئی تنظیمیں اٹھیں لیکن تاریخ گواہ ہے کہ کسی بھی ازم سے امن قائم نہیں ہوا ماسوائے اسلام کے۔معراج کے موقع پر جو پیغام نبی کریم ﷺ کو دیاگیاوہ یہی تھاکہ اب مکہ چھوڑ کر مدینہ جانا ہے

اور وہاںنئی اسلامی ریاست کی تشکیل ہوگی ۔ اور بنی اسرائیل کوامامت وقیادت کے منصب سے ہٹاکر بنی اسمٰعیل کو بٹھایا جائے گا۔ اور ایک ایسا سماج تشکیل دیا جائے گاجہاں ہرشخص پیار، خلوص ، محبت اورامن وآشتی کے ساتھ بھائی بھائی بن کررہے گا۔ اوریہ بات سورۃ بنی اسرائیل کی 22تا39آیات میں کہی گئی ہے۔ کہاگیاکہ کسی کی عبادت نہ کرو سوائے اللہ کے ۔ اللہ تعالیٰ کا خوف دل میں ہوگاتو ایساشخص ہر کام خداخوفی کے تحت انجام دے گا۔ زمین اللہ کی ہے تو قانون بھی اللہ ہی کا چلے ۔ماحول اور معاشرہ کو پاکیزہ بنانے کے لئے اللہ کے بعد والدین کو مقام دیاگیا۔ آج ضعیف والدین کے ساتھ جو سلوک ہورہاہے وہ نہایت ہی دردناک ہے۔ نبی کریم ﷺ کاارشاد مبارک ہے کہ اپنے والدین کو ایک نظردیکھنے سے ایک حج مقبول کا ثواب ملے گا۔ دن میں اگر 100مرتبہ دیکھاگیا تو 100مرتبہ حج مقبول کا ثواب حاصل ہوگا۔ اور پھر یہ کہ جس طرح اللہ کا حق ادا نہیں ہوسکتااسی طرح والدین کاحق اولاد ادا نہیں کرسکتی ۔ رشتہ دار، مسکین اور مسافرکو اس کا حق دیاجائے ۔

جبکہ آج رشتہ داروں کی اہمیت ختم ہوتی جارہی ہے، سب کے پاس روپیہ پیسہ کی اہمیت بڑھ چکی ہے۔ فضول خرچی سے منع کیاگیا۔ فضول خرچی کی ایک مثال یہ ہے کہ ایک صاحب نے معاشرہ میں اپنی ناک رکھنے کے لئے اپنے لڑکے کے ولیمہ کے لئے اپنے گھر کو فروخت کردیا اور پھر ولیمہ دیا۔ بعدازاں کرایہ کے گھر میں زندگی گزاری ۔ اپنی ضرورت کو روک کر دوسروں کی ضرورت پوری کرنے کی مثالیں اسلام دیتا ہے اور اگرتم کچھ نہیں دے سکتے تو نرمی سے انکار کردو۔ جناب محمداکرم علی سکریڑی مقامی نے پروگرام کی نظامت کی ۔محمد عارف الدین معاون امیرمقامی ، محمد آصف الدین ، محمد نظام الدین پرنسپل ، اقبال الدین انجینئر، سید سلام اللہ معاون ناظم علاقہ ، محمدابراھیم مؤظف مدرس ، شیخ عبدالوحید ، محمدجمیل الدین احمد سابق امیرمقامی ، محمدمجتبیٰ خان ، طہ کلیم ، صلاح الدین لیکچرر کے علاوہ ارکان و کارکنان کی کثیرتعداد نے اجتماع میں شرکت کی۔

TOPPOPULARRECENT