Monday , November 20 2017
Home / شہر کی خبریں / دن میں گرمی اور رات میں شدید سردی‘وبائی امراض پھوٹ پڑے ‘ موسمی تبدیلی کا بچوں پر زیادہ اثر

دن میں گرمی اور رات میں شدید سردی‘وبائی امراض پھوٹ پڑے ‘ موسمی تبدیلی کا بچوں پر زیادہ اثر

حیدرآباد۔17اکٹوبر(سیاست نیوز) دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد میں ایک مرتبہ پھر وبائی امراض سردی‘ کھانسی ‘ زکام‘ بخاروغیرہ  تیزی سے پھیلنے لگے ہیں۔ شہر میں اچانک رات کے وقت درجہ حرارت میں آرہی گراوٹ کے سبب سردی محسوس ہونے لگی ہے اور بچوں پر اس موسم کی تبدیلی کے اثرات نمایاں ہونے لگے ہیں۔ شہر حیدرآباد میں حالیہ عرصہ میں وبائی امراض پھوٹ پڑنے کی کئی شکایات منظر عام پر آئی تھیں اور ڈینگو‘ ملیریا اور چکون گنیا کے واقعات کی بھی تصدیق کی گئی تھی لیکن ان حالات کے بعد چند ہفتوں کیلئے عوام ابھی راحت کی سانس لے رہے تھے کہ اچانک سردی کے سبب ہونے والی وبائی امراض کا حملہ شروع ہو گیا اور عوام ایک مرتبہ پھر دواخانوں کے چکر کاٹنے پر مجبور ہو چکے ہیں۔ پرانے شہر کے کئی علاقوں میں رات دیر گئے تک داخانوں میں مریضوں کی بڑی تعداد دیکھی جانے لگی ہے اور شہر کے مختلف مقامات پر بچوں کے ان امراض میں مبتلاء ہونے کی شکایات موصول ہو رہی ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ اچانک موسم میں رونما ہورہی تبدیلی کے اثرات بچوں کی صحت پر رونما ہو رہے ہیں۔ گذشتہ تین یوم سے رات میں درجہ حرارت میں گراوٹ اور دن میں گرمی کے سبب جو صورتحال ہو رہی ہے اس کے مضر اثرات انسانی صحت پر مرتب ہوتے ہی ہیں۔ درجہ حرارت میں گراوٹ اور سردی میں اضافہ و تبدیلی ٔ موسم کے دوران بچوں کی صحت کے متعلق احتیاط برتنے کی ضرورت ہے علاوہ ازیں موسم کی تبدیلی کا اثر جسم کی دفاعی صلاحیتوں پر بھی ہوا کرتا ہے اسی لئے ایسے موسم میں بچوں اور ضعیف العمر افراد کوکافی محتاط رہنا چاہئے ۔دونوں شہروں میں موجود ماہرین اطفال کا کہنا ہے کہ ایسے موسم میں بچوں کی خصوصی نگہداشت کی جانی ضروری ہے کیونکہ بچوں کی صحت پر دھوپ کی گرمی اور ٹھنڈی ہواؤں کے سبب مضر اثرات ہوتے ہیں۔ دواخانہ سے رجوع ہونے والے بیشتر مریضوں کی شکایات میں بخار ‘ سردی‘ کھانسی اور نزلہ ہے جو عام مرض کی طرح ہے لیکن ان امراض کے علاج میں کوتاہی نہ کرتے ہوئے  فوری ڈاکٹر سے رجوع کیا جانا چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT