Monday , September 24 2018
Home / شہر کی خبریں / دواخانہ عثمانیہ میں عورت کی نعش کو چوہے کترنے کے واقعہ کی تحقیقات کا حکم

دواخانہ عثمانیہ میں عورت کی نعش کو چوہے کترنے کے واقعہ کی تحقیقات کا حکم

نعش عصری مردہ خانہ کے فریزر میں رکھی گئی تھی، ڈائرکٹر طبی تعلیم کی وضاحت
حیدرآباد۔/20ڈسمبر، ( پی ٹی آئی ) تلنگانہ کے کلیدی سرکاری دواخانہ عثمانیہ جنر ل ہاسپٹل کے مردہ خانہ میں ایک عورت کی نعش ، چوہے نوچنے کے سبب مسخ ہونے کے واقعہ پر تنقیدوں کا نشانہ بننے والے محکمہ صحت کے حکام نے اس المناک واقعہ کی تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔ ڈائرکٹر میڈیکل ایجوکیشن ( ڈی ایم ای ) ڈاکٹر کے رمیش ریڈی نے کہا کہ ’ تحقیقات کا حکم دیا گیا ہے اور مردہ خانہ کے ذمہ داروں کو وجہ نمائی نوٹس جاری کی گئی ہے۔ ہمیں اس کے اسباب معلوم کرناہے کہ آیا یہ واقعہ کس طرح پیش آیا‘ انہوں نے کہا شبہ کیا جاتا ہے کہ چوہوں نے اس نعش کے چہرے کے کچھ حصوں اور ناک کو کتر دیا تھا ۔ متوفی عورت کے ارکان خاندان نے گزشتہ روز مردہ خانہ پہنچنے کے بعد دیکھا تھا کہ نعش مسخ ہوچکی ہے ۔ بعد ازاں انہوں نے دواخانہ حکام سے شکایت کی تھی ۔ ڈاکٹر ریڈی نے کہا کہ ’ یہ ایک عصری مردہ خانہ ہے۰۰۰ ہم نے متعلقہ حکام سے کہا ہے کہ اس بات کا پتہ چلایا جائے کہ آیا یہ واقعہ آخر کس طرح پیش آیا کیونکہ یہ نعش فریزر ( برفدان ) میں رکھی گئی تھی‘۔ حکام سے کہا گیا ہے کہ یہ یقینی بنانے کیلئے اقدامات کئے جائیں کہ اس قسم کا واقعہ دوبارہ پیش نہ آئے۔ انہوں نے دواخانہ عثمانیہ کے سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر بی ناگیندر بھی اس واقعہ کی تفصیلات کا جائزہ لے رہے ہیں۔ افضل گنج پولیس اسٹیشن کے انسپکٹر پی گیانیندر ریڈی نے کہا کہ 21 سالہ عورت نے پیر کے روز حبیب نگر میں واقع اپنے گھر میں پھانسی لی تھی جس کی نعش اسی شب او جی ایچ کے مردہ خانہ کو منتقل کی گئی تھی۔ریاستی انسانی حقوق کمیشن نے میڈیا کے ذریعہ اس واقعہ کا از خود نوٹ لیتے ہوئے محکمہ صحت و طبابت کے پرنسپال سکریٹری اورعثمانیہ دواخانہ کے سپرنٹنڈنٹ کو 28ڈسمبر تک رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت دی ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT