Saturday , November 25 2017
Home / Top Stories / دولت اسلامیہ پر اب تک 9000 فضائی حملے ہوچکے ہیں : بارک اوباما

دولت اسلامیہ پر اب تک 9000 فضائی حملے ہوچکے ہیں : بارک اوباما

واشنگٹن ۔ 15 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) امریکی صدر بارک اوباما نے کہا ہے کہ ان کا ملک شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کو ماضی کے مقابلے میں کہیں زیادہ نشانہ بنا رہا ہے۔ تاہم انھوں نے تسلیم کیا ہے کہ یہ ایک مشکل جنگ ہے اور اس میں تیزی سے آگے بڑھنے کی ضرورت ہے۔ امریکی محکمہ دفاع میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بارک اوباما کا کہنا تھا کہ امریکہ نے نہ صرف دولت اسلامیہ کے کئی اہم رہنماؤں کو نشانہ بنایا ہے بلکہ تیل کی ان تنصیبات پر بھی حملے کیے ہیں جن سے حاصل شدہ تیل فروخت کر کے شدت پسند تنظیم کارروائیوں کے لیے رقم فراہم کرتی رہی تھی۔ بارک اوباما کا کہنا تھا کہ نومبر کے مہینے میں دولتِ اسلامیہ کے خلاف جتنے حملے کیے گئے اتنے اب تک نہیں کیے گئے تھے۔2014 کے موسم گرما سے دولتِ اسلامیہ کے شدت پسندوں کے خلاف امریکی قیادت میں شروع ہوئی  عسکری مہم کے دوران تقریباً 9000 فضائی حملے کیے جا چکے ہیں۔ بارک اوباما نے دعویٰ کیا کہ عراق میں دولتِ اسلامیہ جس علاقے پر قابض تھی اس میں سے 40 فیصد علاقہ اس سے واپس لیا جا چکا ہے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس شدت پسند تنظیم نے عراق یا شام کے کسی بھی علاقے میں جاریہ سال موسمِ گرم سے اب تک کوئی کامیاب زمینی کارروائی نہیں کی ہے۔ امریکی صدر نے کویتی نژاد برطانوی شہری محمد ایموازی المعروف جہادی جان سمیت دولتِ اسلامیہ کے ان شدت پسند رہنماؤں کے نام بھی بتائے جو حالیہ کارروائیوں میں مارے گئے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ’داعش کے رہنما کہیں نہیں چھپ سکتے اور ان کے لیے ہمارا سادہ اور واضح پیغام یہی ہے کہ اب تمہاری باری ہے۔‘ کامیابیوں کے تذکرے کے ساتھ ساتھ امریکی صدر نے خبردار بھی کیا کہ امریکہ اور اس کے اتحادیوں کو آنے والے وقت میں ایک بہت مشکل جنگ کا سامنا کرنا پڑے گا۔

TOPPOPULARRECENT