Thursday , September 20 2018
Home / کھیل کی خبریں / دولت مشترکہ کھیلوں میں ہندوستان کی تیسری بہترین کارکردگی

دولت مشترکہ کھیلوں میں ہندوستان کی تیسری بہترین کارکردگی

66 تمغوں کے ساتھ دولت مشترکہ کھیلوں کی تاریخ میں 500 تمغے مکمل ،کامیابی حاصل کرنے والا پانچواں ملک

گولڈ کوسٹ۔15اپریل(سیاست ڈاٹ کام) ہندستان نے اپنے کھلاڑیوں کے شاندار اور بااثر کھیل کی بدولت 26 طلائی، 20 چاندی اور 20 کانسی سمیت کل 66 تمغے جیت کر گولڈ کوسٹ میں 21 ویں دولت مشترکہ کھیلوں میں اپنی تاریخ کا تیسرا بہترین مظاہرہ کیا۔ہندستان نے ان 66 تمغوں کے ساتھ دولت مشترکہ کھیلوں کی تاریخ میں 500 تمغے بھی پورے کر لیے اور یہ کامیابی حاصل کرنے والا وہ پانچواں ملک بن گیا۔ہندستان میزبان آسٹریلیا اور انگلینڈ کے بعد تیسرے نمبر پر رہا۔آسٹریلیا نے 80 طلائی سمیت 198 تمغے جیتے جبکہ انگلینڈ نے 45 طلائی سمیت 136 تمغے جیتے ۔کینیڈا 15 طلائی سمیت 82 تمغے جیت کر چوتھے اور نیوزی لینڈ 15 طلائی سمیت 46 تمغے جیت کر پانچویں نمبر پر رہا۔ہندستان نے 2014 کے گلاسگو دولت مشترکہ کھیلوں کی 15 طلائی سمیت 64 کی کل میڈل کی تعداد کو کہیں پیچھے چھوڑ دیا۔ہندوستان کا دولت مشترکہ کھیلوں میں بہترین مظاہرہ اپنی میزبانی میں2010 دہلی میں دوسرا مقام رہا تھا جہاں اس نے 38 طلائی سمیت کل 101 تمغے جیتے تھے ۔ہندستان نے 2002 کے مانچسٹر دولت مشترکہ کھیلوں میں 30 طلائی سمیت 69 تمغے جیتے تھے اور اس وقت وہ چوتھے نمبر پر رہا تھا۔دولت مشترکہ کھیلوں کی تاریخ میں ہندستان کے اب کل 504 تمغے ہوگئے ہیں جن میں 181 طلائی، 175 چاندی اور 148 کانسی شامل ہیں۔ہندستان نے کھیل کے آخری دن اتوار کو سات تمغے جیت کر اپنے تمغوں کی مجموعی تعداد کو 66 پہنچا دیا۔ہندستان نے ان کھیلوں میں کئی مقابلوں میں اپنا بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔خاص طور پر باکسنگ، ویٹ لفٹنگ، شوٹنگ ، ٹیبل ٹینس، کشتی اور بیڈمنٹن میں ہندستان کی کارکردگی انتہائی شاندار رہی اور ہندستان نے اپنے سب سے زیادہ تمغے انہی کھیلوں میں جیتے ۔نشانہ بازی میں ہندستان نے سب سے زیادہ تمغے حاصل کئے ۔نوجوان نشانے بازوں کی شاندار کارکردگی کی بدولت ہندستان نے سات طلائی، چار چاندی اور پانچ کانسی کل 16 تمغے جیتے ۔اس کے بعد کشتی کا نمبر رہا جہاں ہندستان نے پانچ طلائی، تین چاندی اور چار کانسی سمیت کل 12 تمغے جیتے ۔اس کے بعد باکسنگ اور ویٹ لفٹنگ کا نمبر رہا جہاں ہندوستانی کھلاڑیوں نے نو نو تمغے جیتے ۔ ویٹ لفٹنگ میں ہندوستان کو پانچ طلائی، دو چاندی اور دو کانسی اور باکسنگ میں تین طلائی، تین چاندی اور تین کانسی ملے ۔ٹیبل ٹینس کی کامیابی ہر لحاظ سے حیرت انگیز رہی جس میں ہندوستانی کھلاڑیوں نے تین طلائی، دو چاندی اور تین کانسی سمیت کل آٹھ تمغے جیتے ۔بیڈمنٹن میں ہندستان نے دو طلائی، تین چاندی اور ایک کانسی سمیت چھ تمغے حاصل کئے ۔ایتھلیٹکس میں ہندوستان کو ایک سنہری، ایک چاندی اور ایک کانسی کا تمغہ ملا۔اسکواش میں ہندستان کے حصے میں دو چاندی کے تمغہ آئے ۔پیرا پاورلفٹنگ میں ہندوستان کو ایک کانسی کا تمغہ ملا۔ہندستان نے گولڈ کوسٹ میں 226 رکنی دستہ اتارا تھا جس میں آٹھ پیرا کھلاڑی بھی شامل تھے ۔ان کھلاڑیوں میں کل 66 تمغے جیت کر ملک کا نام روشن کر دیا۔گولڈ کوسٹ میں ہندوستان کو طلائی تمغہ دلانے کا آغاز ویٹ لفٹر میرابائي چانو نے کیا تھا اور ان کھیلوں کا اختتام بیڈمنٹن کھلاڑی سائنا نہوال نے طلائی تمغہ جیت کر کیا۔ہندستان کے لحاظ سے ان کھیلوں کی بہترین کھلاڑی ٹیبل ٹینس منیکا بترا رہیں جنہوں نے کمال کا مظاہرہ کرتے ہوئے چار تمغے حاصل کئے ۔منیکا نے خواتین ٹیم طلائی، خواتین کے سنگلز گولڈ، خاتون ڈبلز چاندی اور مکسڈ ڈبلز کانسی کا تمغہ جیتا۔ہندوستان کو ان کھیلوں میں اگر سب سے زیادہ مایوس کسی نے کیا تو وہ مرد اور خاتون ہاکی ٹیمیں رہیں جو فائنل میں نہیں پہنچ سکیں اور کانسی مقابلے بھی ہار گئیں۔مرد ٹیم نے دہلی اور گلاسگو میں چاندی کا تمغہ جیتے تھے لیکن اس بار اسے کانسی کے لئے انگلینڈ سے 1۔2 سے شکست کا سامنا کرنا پڑا جبکہ خاتون ٹیم بھی کانسی کے مقابلے میں انگلینڈ سے 0۔6 سے ہار گئی۔وہیں نشانے بازوں میں گگن نارنگ اور مانوجیت سنگھ سندھو جیسے تجربہ کار نشانے بازوں کے لئے یہ کھیل مایوس کن اور دونوں ہی میڈل ریس میں نہیں پہنچ سکے ۔جمناسٹک، تیراکی، باسکٹ بال، سائیکلنگ اور لان بال میں ہندوستان کا کھاتہ نہیں کھلا۔

TOPPOPULARRECENT