Monday , September 24 2018
Home / شہر کی خبریں / دونوں شہروں میں وبائی امراض کا تیزی سے پھیلاؤ تشویشناک

دونوں شہروں میں وبائی امراض کا تیزی سے پھیلاؤ تشویشناک

عوام کو خطرناک بخار سے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کا مشورہ ، آب و ہوا میں تبدیلی کے اثرات

عوام کو خطرناک بخار سے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کا مشورہ ، آب و ہوا میں تبدیلی کے اثرات
حیدرآباد ۔ 13 ۔ جنوری : ( سیاست نیوز) : دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد میں تیزی سے وبائی امراض پھیل رہے ہیں ۔ شہر کے موسم میں یکلخت پیدا ہورہی تبدیلی کے باعث شہریوں میں مختلف بیماریاں پھیلتی جارہی ہیں جن میں سردی ، زکام ، حلق میں درد ، بخار و دیگر امراض شامل ہیں ۔ ماہر اطباء کا کہنا ہے کہ اگرچیکہ حلق میں درد ، سردی ، زکام یا بخار سوائن فلو نہیں ہے لیکن عوام کو اس خطرناک بخار سے احتیاطی تدابیر بھی اختیار کرنے چاہئے ۔ شدید بخار ، زکام ، سردی اور دیگر امراض کے شکار افراد کو بھیڑ بھاڑ والے علاقوں جیسے بازاروں ، نمائش ، تھیٹرس وغیرہ جانے سے اجتناب کرنا چاہئے چونکہ امراض میں مبتلا فرد اگر گھومتا رہے تو نہ صرف اس کی صحت میں فوری سدھار ممکن نہیں ہوگا بلکہ دیگر افراد بھی اس متاثرہ شخص سے متاثر ہوسکتے ہیں ۔ شہر کے دواخانوں میں بخار و سردی کے سبب ہونے والی عام شکایات کے مریضوں سے دواخانے بھرے پڑے ہیں ۔ لیکن شہر حیدرآباد کے موسم میں پہلی مرتبہ دیکھی جارہی تبدیلی کے سبب یہ صورتحال پیدا ہوئی ہے ۔ وبائی امراض کا آغاز ابتداء میں حلق میں سوزش و جلن سے ہورہا ہے اور یہ مرض بتدریج بڑھتے ہوئے سردی ، زکام اور بخار جیسی کیفیت میں تبدیل ہوتا جارہا ہے ۔ شہر کے علاوہ نواحی علاقوں میں گذشتہ و جاریہ ماہ سوائن فلو کے واقعات کے سبب شہریوں میں خوف و سراسیمگی کی صورتحال پیدا ہورہی ہے ۔ ایسی صورت میں حکومت کے شعبہ صحت کے علاوہ مجلس بلدیہ عظیم ترحیدرآباد کو فوری متحرک ہوتے ہوئے عوام میں شعور اجاگر کرنا چاہئے تاکہ عوام میں پھیلے خوف کو دورہ کیا جاسکے ۔ حیدرآباد کے بیشتر سلم علاقوں میں بچوں کو شدید بخار ، کھانسی ، سردی ، زکام کی شکایات عام ہوتی جارہی ہیں ۔ جس سے والدین خدشات کا شکار ہورہے ہیں ۔ نوجوانوں میں سردی ، کھانسی ، گلے میں خراش اور حلق کی سوزش کی شکایات کے سبب وہ بھی بخار میں مبتلا ہورہے ہیں ۔ ڈاکٹرس کے بموجب آب و ہوا کے علاوہ حدت میں ریکارڈ کی جارہی تبدیلی کے باعث یہ وبائی امراض تیزی سے پھیل رہے ہیں اور ڈاکٹرس نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ شہر میں عوام سوائن فلو کے سبب کافی خوفزدہ ہیں چونکہ اس بخار کے راست اثرات اعضائے رئیسہ پر مرتب ہونے کے خدشات کے تحت مریض فی الفور علاج پر توجہ مرکوز کئے ہوئے ہیں ۔ عوامی شکوک و شبہات کو دور کرنے کے لیے یہ ضروری ہے کہ سابق کی طرح اس مرتبہ بھی ریاستی حکومت کو سرکاری دواخانوں میں سوائن فلو کے ٹسٹ کے خصوصی مراکز قائم کرنے چاہئے تاکہ مریض خدشات کا شکار ہوئے بغیر دواخانوں سے رجوع ہوتے ہوئے معائنہ کرواسکیں اور مطلوبہ ادویات حاصل کرسکیں ۔ حکومت و بلدیہ کی جانب سے شہر کے تمام بڑے سرکاری دواخانوں میں ان مراکز کے قیام کے علاوہ دونوں شہروں کے سلم علاقوں میں بھی موبائیل لیابس کا آغاز کیا جانا ضروری ہے تاکہ غریب عوام کو فوری سہولت کی فراہمی کے ذریعہ علاج کے لیے رہنمائی کی جائے ۔ دونوں شہروں میں متاثرہ عوام کے خدشات کو دور کرنے میں حکومت کی ناکامی کے سبب شہریوں کی تشویش میں تیزی سے اضافہ ہوتا جارہا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT