Friday , July 20 2018
Home / Top Stories / دونوں پیروں سے محروم چینی کوہ پیما ایورسٹ مہم کیلئے پرعزم

دونوں پیروں سے محروم چینی کوہ پیما ایورسٹ مہم کیلئے پرعزم

بھکتاپور (نیپال) ۔ 6 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ایک چینی کوہ پیما جس نے 40 سال قبل دنیا کی سب سے اونچی چوٹی ایورسٹ کو سر کرنے کا عزم کیا تھا لیکن شدید سردی اور برفباری سے سند ہو کر اس کے دونوں پیر جواب دے گئے تھے اور بالآخر انہیں کاٹنا پڑا تھا، تاہم اتنے سال گزرنے کے بعد بھی اس کا ایورسٹ کی چوٹی کو سر کرنے کا عزم سرد نہیں پڑا ہے۔ قبل ازیں حکومت نیپال نے اندھوں اور پیروں سے محروم افراد کیلئے کوہ پیمائی پر امتناع عائد کردیا تھا جس نے ژیابویو نامی اس کوہ پیما کو بہت مایوس کیا تھا لیکن نیپال کی ایک عدالت عالیہ کی جانب سے حکومت کے فیصلہ کو کالعدم کرنے کے بعد ژیابولو کو ایک بار پھر امید ہیکہ وہ ایورسٹ کی چوٹی سر کرسکے گا۔ 8848 میٹر بلند ایورسٹ کی چوٹی کو سر کرنے یہ اس کی پانچویں کوشش ہوگی۔ یاد رہیکہ 1975ء میں ژیابویو ایک چینی ٹیم کا حصہ تھا جس نے ایورسٹ کی چوٹی کو سر کرنے کی مہم شروع کی تھی لیکن ایورسٹ کے قریب پہنچنے کے بعد انتہائی خراب موسم کی وجہ سے ٹیم کو وہیں رک جانا پرا۔ آکسیجن کی کمی کی وجہ سے اسے اپنے پیروں کے گھٹنوں کے نیچے کے حصہ میں شدید سند پن کا دکھ بھی جھیلنا پڑا اور اسے اپنے دونوں پنجوں سے محروم ہونا پڑا۔ 1996ء میں بلڈکینسر کی وجہ سے اس کی دونوں ٹانگوں کو کاٹ دیا گیا۔ دونوں پیروں سے محروم ژیا 2014ء میں بھی ایورسٹ سر کرنے کی کوشش کی لیکن شدید برفانی طوفان سے 16 شیرپاگائیڈ ہلاک ہوگئے اور مہم کو روکنا پڑا۔ اس کی آخری کوشش 2016ء میں تھی جہاں ایک بار پھر انتہائی خراب موسم نے کھیل بگاڑ دیا اور ایورسٹ سے صرف 200 میٹر دور رہنے کے باوجود اسے اپنی ٹیم کے ساتھ واپس آنا پڑا تھا تاہم اب ایسا لگتا ہیکہ عدالت کے فیصلہ کے بعد اس کا یہ دیرینہ خواب ضرور شرمندہ تعبیر ہوگا۔

TOPPOPULARRECENT