Tuesday , September 25 2018
Home / ہندوستان / دہشت گردوں کو پاکستانی مدد بند کرنے کے بعد مذاکرات

دہشت گردوں کو پاکستانی مدد بند کرنے کے بعد مذاکرات

پڑوسی ملک امن بات چیت کا خواہاں نہیں: جنرل بپن راوت

جئے پور 22 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستانی فوج کے سربراہ جنرل بپن راوت نے آج کہاکہ پاکستان کے ساتھ صرف اُس وقت امن بات چیت ہوسکتی ہے جب وہ جموں و کشمیر میں دہشت گردوں کی تائید بند کرے۔ اُنھوں نے کہاکہ تاہم اس (پاکستان) کے اقدامات سے ایسا معلوم نہیں ہوتا ہے کہ وہ فی الواقعی امن چاہتا ہے۔ وہ ہند ۔ پاک سرحد سے قریب مغربی سیکٹر میں تھے جہاں اُنھوں نے جنوبی کمانڈ کی طرف سے صحرا تھار میں کی گئی ’’ہمیشہ وجیئی‘‘ (ہمیشہ فاتح) فوجی مشقوں کا مشاہدہ کیا۔ راوت نے کہاکہ پاکستان کو دہشت گردوں کی تائید بند کردینا چاہئے۔ جنرل راوت نے بارمیر میں مشقوں سے قریب کے ایک علاقہ میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ ’’اس کے بعد ہی امن بات چیت شروع ہوسکتی ہے‘‘۔ انھوں نے کہاکہ ہم بھی خوشگوار تعلقات چاہتے ہیں لیکن (پاکستان کی طرف سے) کئے جانے والے اقدامات اور جموں و کشمیر میں پھیلنے والی دہشت گردی سے ایسا نہیں معلوم ہوتا کہ وہ (پاکستان) بھی فی الواقعی امن کے خواہاں ہیں‘‘۔ انھوں نے کہاکہ فوج، نیم فوجی فورسیس اور جموں و کشمیر پولیس جموں و کشمیر میں عسکریت پسندوں کے خلاف کامیابی کے ساتھ کارروائی کررہی ہے اور یہ اقدامات جاری رہیں گے۔ جنرل راوت کے ان تبصروں سے ایک دن قبل وزارت اُمور خارجہ میں ترجمان راویش کمار نے کہا تھا کہ پاکستان کے ساتھ ہندوستان خوشگوار تعلقات چاہتا ہے بشرطیکہ دہشت گردوں کے خلاف اسلام آباد کی طرف سے کارروائی کی جائے۔ اس سے قبل پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے بہتر تعلقات کیلئے اپنی تائید کا عہد کیا تھا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT