Thursday , December 14 2017
Home / دنیا / دہشت گردی کیخلاف جنگ کسی مذہب کے خلاف نہیں : ہندوستان

دہشت گردی کیخلاف جنگ کسی مذہب کے خلاف نہیں : ہندوستان

دنیائے امن کو سنگین خطرات لاحق ، عالمی اتحاد ضروری، اقوام متحدہ میں نمائندہ ہند سید اکبرالدین کا خطاب
اقوام متحدہ ۔ 12 مئی (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستان نے اقوام متحدہ سلامتی کونسل کو بتایا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کسی مذہب کے خلاف تصادم نہیں ہے۔ اس لعنت کو ختم کرنے کیلئے عالمی اتحاد و تعاون ضروری ہے۔ ابنائے امن کو دہشت گردی سے خطرات لاحق ہوگئے ہیں۔ دنیا کی امن و سلامتی کو یقینی بنانے کیلئے ضروری ہیکہ ساری دنیا متحد ہوجائے اور ایک دوسرے کا ساتھ دے کر دہشت گردی کا خاتمہ کرے۔ اقوام متحدہ میں ہندوستان کے مستقل نمائندہ سید اکبرالدین نے نظریاتی فریم ورک کی نشاندہی کی اور کہا کہ دہشت گرد گروپس اپنی اصل طاقت کے ساتھ تنگ نظرانہ مفادات کا خاتمہ کرنا شروع کیا ہے۔ اس سے تحدیدات نافذ کئے جارہے ہیں جواب میں دہشت گردی کے خطرات میں اضافہ ہورہا ہے۔ دہشت گردی کے خلاف لڑائی کو کسی مذہب کے خلاف تصادم کی نظر سے نہیں دیکھا جانا چاہئے۔ یہ انسانی اقدار اور غیرانسانی طاقتوں کے درمیان ایک جدوجہد ہے۔

یہ بھی لڑائی جاری ہے کہ ہم اپنے اقدار اور مذاہب کے اصل پیغام کو مضبوط بنا کر پیش کریں تاکہ تنگ نظرانہ، نظریات اور دہشت گردی کے نظریات کا خاتمہ و مقابلہ کیا جاسکے۔ دہشت گردی کو ختم کرنے کیلئے طویل مدتی جدوجہد کی ضرورت ہے۔ دہشت گردی عالمی امن اور سلامی کیلئے سب سے زیادہ سنگین خطرہ قرار دیتے ہوئے انہوں نے تشویش ظاہر کی کہ تنگ نظری اور ذاتی مفادات کی وجہ سے جو حالات پیدا کردیئے گئے ہیں اس کی وجہ سے دہشت گردی بڑھ رہی ہے۔ ایک ایسا بین الاقوامی تعاون کا قانونی فریم ورک تیار کیا جائے جس کی مدد سے ہم دہشت گردی کو ختم کرسکیں۔ اس کیلئے عالمی تعاون ضروری ہے۔ ہندوستانی سفیر نے زور دے کر کہا کہ دہشت گرد گروپس کو ایک نظریاتی طاقت رہنمائی کررہی ہے۔ اس فریم ورک کے خلاف کام کرنے کی ضرورت ہے۔

TOPPOPULARRECENT