Thursday , December 14 2017
Home / Top Stories / دہشت گردی کے خاتمہ تک پاکستان سے مذاکرات بے معنی

دہشت گردی کے خاتمہ تک پاکستان سے مذاکرات بے معنی

مودی حکومت دشمنوں کو منہ توڑ جواب دے گی،نظام آباد میں بی جے پی کا ’’یوم نجات ‘‘ پروگرام ، راجناتھ سنگھ کا خطاب
حیدرآباد ۔ 17 ستمبر (سیاست نیوز) مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے آج پاکستان کے ساتھ اُس وقت تک بات چیت کے امکان کو مسترد کردیا تاوقتیکہ وہ سرحد پار دہشت گردی کو امداد دینا بند کرے۔ ہندوستان کو غیرمستحکم کرنے کے مقصد سے پاکستان دہشت گردی کی سرپرستی کررہا ہے۔ نظام آباد میں ’’یوم آزادی تلنگانہ‘‘ تقریب کے حصہ کے طور پر منعقدہ جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ ہندوستان کی ہمیشہ یہی پالیسی رہی ہے کہ پڑوسی ممالک کے ساتھ خوشگوار تعلقات کو برقرار رکھا جائے۔ بعض لوگوں نے مشورہ دیا تھا کہ ہمیں پاکستان سے مذاکرات کرنی چاہئے لیکن میں یہ کہوں گا کہ ہم ہر کسی سے بات چیت کیلئے تیار ہیں تاہم پاکستان اس سوچ کو سمجھنے سے قاصر ہے۔ پاکستان جب تک ہندوستان کو کمزور اور غیرمستحکم کرنے کی کوششوں سے باز نہیں آئے گا، اس سے بات چیت بے معنی رہے گی۔ مودی حکومت، دشمنوں کو منہ توڑ جواب دے رہی ہے اور ہمارے ملک میں دہشت گردوں کو گھسانے والوں اور جنگ بندی کی خلاف ورزیوں کرنے والوں کو ہم ہرگز نہیں بخشیں گے۔ میں آپ کو یہ تیقن دینا چاہتا ہوں کہ ہم دہشت گردی کا خاتمہ کرکے رہیں گے، انتہا پسندی اور نکسل ازم کو بھی جڑ سے اُکھاڑ پھینکیں گے۔ بی جے پی نے پر ’’یوم نجات‘‘ مناتے ہوئے راج ناتھ سنگھ، مرکزی مملکتی وزیر ہنس راج کے علاوہ بی جے پی کے اعلیٰ قائدین کو مدعو کیا تھا۔ اس موقع پر مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے اپنی تقریر میں کہا کہ تلنگانہ کی ایک تاریخ ہے اور یہاں کی عوام نے آج بھی جوش و خروش باقی ہے اور مجاہدین آزادی کی قربانی اور جدوجہد کے نتیجہ میں ملک آزاد ہوا تو تلنگانہ کو آزادی کیلئے علیحدہ طور پر جدوجہد کرنا پڑا اور سردار ولبھ بھائی پٹیل کی قیادت میں تلنگانہ کو آزادی حاصل ہوئی ہے

اور اس کیلئے کئی افراد نے قربانیاں دی ہے اشفاق اللہ خان شہید جیسے مجاہدین کی قربانیوں کے نتیجہ میں ہی تلنگانہ کو آزادی حاصل ہوئی ہے انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر بی آر امبیڈ کر کی نگرانی میں ایک مستحکم دستور کو بنایا ہے اور ہندوستان ایک مستحکم ملک ہے دنیا کی کوئی بھی طاقت ملک کو کمزور نہیں کرسکتی ۔ انہوں نے تلنگانہ کے یوم نجات اور نریندر مودی کی سالگرہ ایک ہی دن منائی جانے کی وجہ سے اہمیت کا حامل قرار دیتے ہوئے نریندر مودی کی حکومت میں تمام طبقات کی فلاح بہبودی یقینی بنانے کا اظہار کیا اس موقع پر مملکتی وزیر برائے داخلہ مسٹر ہنس راج نے اپنی تقریر میں کہا کہ 17؍ ستمبر اہمیت کا حامل ہے اسی طرح وزیر اعظم نریندر مودی کی سالگرہ ہے اور تلنگانہ کو نظام کی حکومت سے چھٹکارہ ہوا تھا اور تلنگانہ یوم نجات منانے کیلئے لال کشن اڈوانی نے مہم شروع کی تھی اور راج ناتھ سنگھ اس تقریب میں شرکت کرتے ہوئے مہم کو آگے بڑھایا ہے ٹی آرایس اقتدار میں ہونے سے قبل یوم نجات منانے کا اعلان کرتے ہوئے ا سے انحراف کیا اس موقع پر بی جے پی کے ریاستی صدر ڈاکٹر لکشمن نے اپنی تقریر میں کہا کہ ٹی آرایس کے سربراہ چندر شیکھر راؤ نے مجلس سے اتحاد کرتے ہوئے ووٹ بینک کے خاطر یوم نجات کو منانے سے گریز کررہے ہیں آزادی کے بعد کانگریس نے مجلس کے دبائو پر یوم نجات منانے سے گریز کیا تھا۔ شہید ان تلنگانہ کے جدوجہد کے نتیجہ میں علیحدہ ریاست تلنگانہ کا قیام ہوا تو اس کا فائدہ صرف کے سی آر کے خاندان حاصل ہورہا ہے ۔ اس موقع پر بی جے پی کے رکن اسمبلی کشن ریڈی نے بھی اپنی تقریر میں کہا کہ یوم نجات کی مہم ودیا ساگر راؤ کی قیادت میں شروع کی گئی تھی اور ریاستی حکومت کے سربراہ مجلس سے اتحاد کرتے ہوئے یوم نجات منانے سے گریز کیا ہے ۔لیکن آنے والے دنوں میں بی جے پی اقتدار پر آنے کے بعد یوم نجات سرکاری طور پر منانے کا اعلان کیا اس موقع پر سابق مرکزی وزیر و رکن پارلیمنٹ بنڈارو دتاتریہ اپنی تقریر میں 2019 ء میں گولکنڈہ قلعہ پر یوم نجات کی تقریب منانے کا اعلان کیا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT