Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / دہلی میں جنگل راج، بسی آر ایس ایس کے آدمی

دہلی میں جنگل راج، بسی آر ایس ایس کے آدمی

فوری برطرفی کا مطالبہ، دہلی پولیس بی جے پی غنڈوں کے ہاتھوں کھلونا ، کانگریس اور بایاں بازو
نئی دہلی ۔ 17 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) پٹیالہ ہاوز کورٹ میں حملوں کا حوالہ دیتے ہوئے کانگریس نے کہا کہ دہلی میں ’’جنگل راج‘‘ کی کیفیت ہے اور پولیس کمشنر دہلی بی ایس بسی کی فی الفور برطرفی کا مطالبہ کیا۔ پارٹی ترجمان اور دہلی پردیش کانگریس کمیٹی صدر اجئے ماکن نے آج ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ دہلی پولیس بی جے پی کے غنڈوں کی آلہ کار بن چکی ہے۔ کمشنر پولیس بی ایس بسی کو اس عہدہ سے فوری ہٹانا اور انہیں معطل کرنا چاہئے۔ ماکن نے کہاکہ یہ انتہائی افسوسناک پہلو ہیکہ بسی سبکدوشی کے بعد کلیدی عہدہ حاصل کرنے کی خاطر سیاسی آقاؤں کو اپنی وفاداری دکھانا چاہتے ہیں۔

کانگریس لیڈر نے کہا کہ یہ قیاس آرائیاں جاری ہیں کہ بسی اپنی سبکدوشی کے بعد انفارمیشن کمشنر بننا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس پولیس کمشنر کو سبکدوشی کے بعد ایسا کوئی عہدہ نہیں دیا جانا چاہئے۔ پٹیالہ ہاؤز کورٹ میں تشدد کے واقعات اس بات کا واضح اشارہ ہے کہ دہلی پولیس پر بی جے پی کے غنڈوں کا کنٹرول ہے۔ عدلیہ میں ہر کسی کو رسائی کا حق ہے اور کوئی بھی شخص پولیس تحویل میں ہونے کے بعد اسے حملوں کا نشانہ بنانا انتہائی افسوسناک ہے۔ یہ بھی ایک تشویشناک پہلو ہیکہ سپریم کورٹ کے احکامات کے باوجود اور ایسے وقت جبکہ سینئر وکلاء پٹیالہ  ہاؤز کورٹ میں موجود تھے، اشرار نے اپنی کارروائی کی اور پولیس خاموش تماشائی بنی رہی۔ پولیس دراصل ان اشرار اور بی جے پی کے غنڈوں کے ہاتھوں کھلونہ بنی ہوئی ہے۔ ایک اور پارٹی ترجمان آر پی این سنگھ نے کہاکہ دہلی میں گذشتہ چند دن سے جو کچھ ہورہا ہے

وہ صاف ظاہر کرتا ہے کہ یہاں جنگل راج ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ حکومت ہند اے بی وی پی کے غنڈے چلا رہے ہیں۔ لا قانونیت، غنڈہ گردی اور خوف و دہشت مودی طرزحکمرانی کی علامت بن چکے ہیں۔ سی پی آئی ایم پولیٹ بیورو رکن برنداکرات نے بھی دہلی پولیس کمشنر بی ایس بسی پر شدید تنقید کرتے ہوئے انہیں شاکھا (آر ایس ایس) کا آدمی قراردیا اور پٹیالہ ہاؤز کورٹ کامپلکس میں صحافیوں، طلبہ اور ٹیچرس پر حملوں کے واقعات کی بناء انہیں فوری برطرف کرنے کا مطالبہ کیا۔ جے این یو کے احتجاجی طلبہ کی تائید کرتے ہوئے برنداکرات نے کہاکہ آر ایس ایس جو ملک پر حکمرانی کررہی ہے وہ ’’راشٹریہ سرونش سمیتی‘‘ (ملک کی تباہی کی تنظیم) سے کم نہیں۔ سی پی آئی نے بھی ایک بیان میں کنہیا کمار پر حملہ کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کیا۔ پارٹی نے کہا کہ مرکزی وزیرداخلہ راجناتھ سنگھ کو اس مسئلہ پر بیان دینا چاہئے۔ سی پی آئی نے اس حملہ میں ملوث وکلاء کو آر ایس ایس کے غنڈے قرار دیتے ہوئے کہا کہ پولیس کی مدد کے بغیر وہ کنہیا کو نشانہ نہیں بنا سکتے تھے۔ ان نام نہاد وکلاء کے خلاف سخت کارروائی کی جانی چاہئے اور بسی کو بھی ذمہ دار قرار دیا جائے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT