Thursday , September 20 2018
Home / Top Stories / دہلی میں مخالف تلنگانہ احتجاج

دہلی میں مخالف تلنگانہ احتجاج

کرن کمار ریڈی کی قیادت میں صدرجمہوریہ سے وفد کی ملاقات

کرن کمار ریڈی کی قیادت میں صدرجمہوریہ سے وفد کی ملاقات
نئی دہلی ۔ 5 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) تلنگانہ کے قیام کی شدید مخالفت کرتے ہوئے چیف منسٹر آندھراپردیش کرن کمار ریڈی نے آج اپنا احتجاج دارالحکومت دہلی منتقل کیا، جہاں انہوں نے دھرنا دیکر بیٹھے رہو احتجاج کے علاوہ صدرجمہوریہ پرنب مکرجی سے ملاقات کی۔ ان سے درخواست کی کہ وہ ریاست کی تقسیم کے عمل کو فوری روک دیں۔ آندھراپردیش میں کانگریس حکومت کی قیادت کرنے والے کرن کمار ریڈی نے 5 گھنٹوں تک جنترمنتر پر دھرنا دیا اور نئی ریاست کی تشکیل کے خلاف اپنا شدید اعتراض و احتجاج درج کروایا۔ انہوں نے یہ احتجاج اس وقت کیا جب پارلیمنٹ کے توسیع شدہ سیشن کا آغاز ہوا ہے۔ مرکزی حکومت پر تلنگانہ بل کی منظوری کیلئے زبردست زور ڈالا جارہا ہے۔ جنترمنتر پر منعقدہ احتجاجی دھرنے میں ریاستی وزراء، سیما آندھرا سے تعلق رکھنے والے ارکان اسمبلی اور دیگر کئی قائدین موجود تھے۔ بعدازاں اس دھرنے میں 4 مرکزی وزراء ایم پلم راجو، کے سامباسیوا راؤ، ڈی پورندیشوری اور کے کروپارانی بھی شامل ہوگئے۔ بیٹھے رہو دھرنے کے بعد چیف منسٹر نے راشٹرپتی بھون پہنچ کر صدرجمہوریہ سے ملاقات کی۔ اخباری نمائندوں سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہم نے صدرجمہوریہ سے درخواست کی ہیکہ وہ ریاست آندھراپردیش کی تقسیم کو روکنے کیلئے اپنے اختیارات بروئے کار لائیں۔ ہم نے یہ بھی درخواست کی کہ ریاست آندھراپردیش کو بہرصورت متحد رکھا جائے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ریاست کے 75 تا 80 فیصد افراد تقسیم کے خلاف ہیں۔

TOPPOPULARRECENT