Sunday , December 17 2017
Home / ہندوستان / دہلی ۔ مرکز تنازعہ برائے حکمرانی دستوری بنچ سے رجوع

دہلی ۔ مرکز تنازعہ برائے حکمرانی دستوری بنچ سے رجوع

دونوں فریقوں کو اپنے دلائل وسیع تر بنچ کے روبرو پیش کرنے سپریم کورٹ کی ہدایت
نئی دہلی ۔ 15 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے آج عام آدمی پارٹی حکومت کی جانب سے اُس ہائیکورٹ فیصلہ کے خلاف داخل کردہ عرضیوں کو ایک دستوری بنچ سے رجوع کردیا، جس نے کہا گیا کہ دہلی کوئی ریاست نہیں اور لیفٹننٹ گورنر (ایل جی) اس کے انتظامی سربراہ ہیں۔ جسٹس اے کے سیکری اور جسٹس آر کے اگروال پر مشتمل بنچ نے کہا کہ قانون اور دستور کے اہم امور اس معاملہ میں شامل ہیں اور اس سے کوئی دستوری بنچ نمٹنا چاہئے۔ تاہم بنچ نے اس معاملہ میں وہ سوالات وضع نہیں کئے جن پر دستوری بنچ غوروخوض کرے گی، جس کی تشکیل چیف جسٹس جے ایس کیہر کریں گے اور مرکز و حکومت دہلی سے کہا کہ اپنے کیس کے حق میں دلائل وسیع تر بنچ کے روبرو پیش کریں۔ عام آدمی پارٹی حکومت نے عدالت کو بتایا کہ وہ اس معاملہ پر وسیع تر بنچ کے روبرو عاجلانہ سنوائی کیلئے چیف جسٹس سے اپیل کرے گی کیونکہ دہلی میں حکمرانی اس تنازعہ کے سبب متاثر ہے۔ دہلی حکومت نے 2 فبروری کو فاضل عدالت کو بتایا تھاکہ اسے قانون ساز اسمبلی کے دائرہ کار میں آنے والے معاملوں کے تعلق سے خاص عاملانا اختیارات حاصل ہے اور مرکز یا صدرجمہوریہ یا لیفٹننٹ گورنر ان اختیارات میں مداخلت نہیں کرسکتے۔ تاہم فاضل عدالت نے کہا تھا کہ یہ درست ہے کہ منتخب حکومت کو بعض اختیارات حاصل ہونے چاہئے لیکن آیا یہ دہلی ہائیکورٹ فیصلہ کی مطابقت میں ہوں گے یا اس طرح جیسے دہلی حکومت پیش کررہی ہے ، اس کا جائزہ لینے کی ضرورت ہے۔

TOPPOPULARRECENT