Monday , January 22 2018
Home / اضلاع کی خبریں / دینداری ، شادی کے انتخاب کا بہترین پیمانہ

دینداری ، شادی کے انتخاب کا بہترین پیمانہ

کریم نگر /11 مارچ ( ذریعہ فیاکس ) غڑیب نواز فاؤنڈیشن کے زیر اہتمام مسلم شادی خانہ عثمان پورہ کریم نگر میں ایک روزہ تربیتی اجتماع برائے خواتین کو خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر مفتیہ رضوانہ زرین پرنسپل جامعتہ المومنات نے کہا کہ نیک بیوی متاع عزیز ہے ایک بیوی اگر نیک ہے تو سارے خاندان کو نیک بناتی ہے کیونکہ کسی معاشرہ کی تہذیب و شائستگی کا جائزہ

کریم نگر /11 مارچ ( ذریعہ فیاکس ) غڑیب نواز فاؤنڈیشن کے زیر اہتمام مسلم شادی خانہ عثمان پورہ کریم نگر میں ایک روزہ تربیتی اجتماع برائے خواتین کو خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر مفتیہ رضوانہ زرین پرنسپل جامعتہ المومنات نے کہا کہ نیک بیوی متاع عزیز ہے ایک بیوی اگر نیک ہے تو سارے خاندان کو نیک بناتی ہے کیونکہ کسی معاشرہ کی تہذیب و شائستگی کا جائزہ لینا چاہتے ہیں تو وہاں کی عورتوں کا جائزہ لیا جائے معاشرہ کا حال خود بخود ظاہر ہوجائے گا۔ حضورﷺ نے ان مردوں کی رہنمائی فرمائی جو شادی کرنا چاہتے ہیں کہ انہیں چاہئے کہ وہ دیندار عورت کو ترجیح دیں ۔ حضور ﷺ کا ارشاد گرامی ہے ’’ عورت سے چار وجوہ کی بناء پر نکاح کیا جاتا ہے ۔ اس کے مال کی وجہ سے اس کی حسب نسب کی وجہ سے اس کے حسن و جمال کی وجہ سے یا اس کے دین کی وجہ سے تمہارے ہاتھ خاک آلود ہوں ۔ اگر تم دیندار عورت کو ترجیح نہ دو ۔ اسی طرح لڑکی والوں کو بھی یہ بات لازم ہے کہ وہ ایسا لڑکا تلاش کریں جس کا اخلاق اور دین داری پر عمل اچھا ہوتا کہ وہ اچھے طریقے سے خاندان کا نظام چسکے اور بہتر طریقے سے شریعت اسلامی کے مطابق اپنے اہل و عیال کے حقوق ادا کرسکے ۔ رسول اللہ نے ارشاد فرمایا ’’ جب تمہارے پاس رشتہ کیلئے ایسا شخص آئے جس کے دن سے تم راضی ہوتو اس سے نکاح کردو ۔ اگر تم نے ایسا نہ کیا تو زمین میں سخت فتنہ اور بہت بڑا فساد پھیلے گا ‘‘ ۔ ہمارے معاشرہ میں لڑکی سے شوہر کے اختیار کرنے کی آزادی سلب کی گئی ہے اسے شادی پر مجبور کیا جاتا ہے ۔ جہاں لڑکی والوں میں یہ خامی ہوتی ہے تو لڑکے والے جہیز جیسی لعنت میں ملوث ہو رہے ہیں اور جہیز کو شادی کا ایک لازمی جز سمجھ لیا گیا ہے جس کی وجہ سے آئے دن خلع و طلاق کے کثیر مسائل کا سلسلہ جاری ہے ۔ حضور ﷺ نے فرمایا کہ نکاح کو آسان کرو تاکہ زنا دشوار ہوجائے لیکن موجودہ معاشرہ میں نکاح دشوار اور زنا عام ہوگیا ہے ۔ دین اسلام خاندانی زندگی کو پسند کرتا ہے اور بندہ مومن پر اپنے گھر اور خاندان کی ذمہ داریاں عائد کرتا ہے ایک مسلمان کا گھر مسلم جماعت کی پہلی اینٹ ہے ایک اسلامی گھر وہ خلیہ ہے جو دوسرے خلیوں سے مل کر اسلامی معاشرے کے جسم کو مکمل کرتا ہے ۔ اسلامی نے عورت اور مرد کے درمیان ایسا تعلق پیدا کیا ہے جس سے ان میں محبت ، شفقت اور ہمدردی کے جذبات پروان چڑھتے ہیں ۔ جس سے ایک شخص دوسرے کیلئے سکون اور وقار کا باعث ہوتا ہے اور جس سے محبت کی فضاء قائم ہوتی ہے ۔ جلسہ کا آغاز سمیرہ خاتون کی قرات اور عالمہ رضوانہ خاتون کی نعت شریف سے ہوا ۔ اس جلسہ کی صدارت محترمہ ذکیہ صدیقہ نے کی ۔ مفتیہ سیدہ غوثیہ شاہد مومناتی ، مفتیہ عائشہ سمیہ ، مفتیہ سمیرہ خاتون ، قاریہ عظمی سلطانہ نے بھی مخاطب کیا ۔ دعاء و سلام پر اجتماع کا اختتام عمل میں آیا ۔

TOPPOPULARRECENT