Saturday , November 25 2017
Home / ہندوستان / دینی مدرسہ کے طلبہ رحمن کی دہشت گرد سرگرمیوں سے ناواقف

دینی مدرسہ کے طلبہ رحمن کی دہشت گرد سرگرمیوں سے ناواقف

بھوبنیشور ؍ کٹک 17 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) دینی مدرسہ کے طلبہ جو ضلع کٹک کے علاقہ ٹانگی میں قائم ہے اور مشتبہ القاعدہ دہشت گرد کے زیرانتظام ہے، پشچم کچھا دیہات کے مقامی شہریوں کے بموجب محمد عبدالرحمن جن کا بحیثیت استاد احترام کیا جاتا تھا، ایسی کارروائی میں ملوث تھے، ایک طالب علم نے جو جھارکھنڈ کا متوطن ہے، ادارہ کا تخلیہ کرنے کے لئے اپنا سامان باندھ لینے کے بعد کہاکہ ہم اُن کی دہشت گرد کارروائیوں کے بارے میں کچھ نہیں جانتے تھے۔ ہم سے صرف روزانہ پانچ وقت نماز ادا کرنے کے لئے کہا جاتا تھا اور ہمیں مذہبی اقدار کا درس دیا جاتا تھا۔ ایک 15 سالہ لڑکے کا باپ جو اپنے بیٹے کو جھارکھنڈ واپس لیجانے کے لئے واپس آیا تھا ، کہاکہ ہم غریب لوگ ہیں، ہم اپنے لڑکوں کو تعلیم حاصل کرنے کے لئے بھیجتے ہیں، دہشت گرد بننے کے لئے نہیں۔ دریں اثناء اُلجھن اور بے چینی تمام مقامی عوام کے چہرے پر نظر آرہی تھی۔ ایک مشترکہ ٹیم نے جو شہری اور دیہی پولیس پر مشتمل تھی آج عبدالرحمن کے مدرسہ کی سرگرمیوں کی جانچ کی۔ ریاستی حکومت نے واضح کردیا کہ رحمن 2013 ء سے مدرسہ چلارہا تھا لیکن اُس کے پاس اس کا کوئی رجسٹریشن نہیں تھا۔ دریں اثناء ریاستی بی جے پی نے بی جے ڈی حکومت پر الزام عائد کیاکہ وہ پوری ریاست میں دینی مدرسے قائم کررہی ہے۔ سرکاری ذرائع کے بموجب صرف ایک دینی مدرسہ ریاستی حکومت کے زیرانتظام ہے۔ دیگر 78 کو مالی امداد دی جاتی ہے۔

TOPPOPULARRECENT