Sunday , January 21 2018
Home / اضلاع کی خبریں / دین کی آبیاری اور علم نافع کی فکر کرنا ملت کے ہر فرد کی ذمہ داری

دین کی آبیاری اور علم نافع کی فکر کرنا ملت کے ہر فرد کی ذمہ داری

مٹ پلی ۔12جون ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) مدرسہ تجوید القرآن بسم اللہ مسجد مٹ پلی کا سالانہ جلسہ دستاربندی حفاظ کرام سے مخاطب کرتے ہوئے مہمان خصوصی مفتی شعیب اللہ خان ناظم مسیح العلوم بنگلور نے کہا کہ سالام سچا مذہب ہے ۔ قرآن اللہ تعالیٰ کی ایک صفت ہے ۔ انہوں نے اہل مدرسہ و منتظمین کی جانب سے جلسہ کے انعقاد پر مبارکبادی دیتے ہوئے اسلامی دور

مٹ پلی ۔12جون ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) مدرسہ تجوید القرآن بسم اللہ مسجد مٹ پلی کا سالانہ جلسہ دستاربندی حفاظ کرام سے مخاطب کرتے ہوئے مہمان خصوصی مفتی شعیب اللہ خان ناظم مسیح العلوم بنگلور نے کہا کہ سالام سچا مذہب ہے ۔ قرآن اللہ تعالیٰ کی ایک صفت ہے ۔ انہوں نے اہل مدرسہ و منتظمین کی جانب سے جلسہ کے انعقاد پر مبارکبادی دیتے ہوئے اسلامی دور کے ابتدائی حالات پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ قرآن کریم سب سے عظیم کتاب ہے ‘ بعد اس کے بخاری شریف مسلم شریف اور دیگر اسلامی کتب ہیں ۔ اللہ کا کلاز ( قرآن مجید) جیسے ہی نازل ہوئا نبیؐ نے حفظ کیا ‘ اقراء پڑھو آپ کے سینہ میں جمع کردینا ہماری ذمہ داری ہے ‘ آپؐ کے دور میں صحابہ بھی قرآن کو حفظ کئے ۔ حفاظ کرام اپنے سینوں میں قرآن پاک محفوظ کرتے رہے ہیں ۔ انہوں نے روسی سلطنت کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ 80برس تک اسلامی مرکز بخارا روس کے قبضہ میں تھا ۔ روسی سلطنت نے کئی اذیتیں مسلمانوں کو پہنچائی ‘ اسلامی نظام کو مٹانے کی بھرپور کوشش کی گئی ۔ اسلامی تشخض کو پامال کیا گیا ‘ اپنی بقاء کیلئے مسلمانوں نے تہہ خانوں میں پناہ لی ۔ ان تہہ خانوں میں مقید مسلمانوں کے ذہنوں میں اللہ تعالیٰ نے احساس پیدا کیا کہ دین کی بقاء کیلئے علم دین کا حصول کیا جائے چنانچہ اس وقت تہہ خانوں میں معصوم بچوں کو حفظ قرآن کروانے عالم دین بننے مفتی بنانے کا نظام خیفہ طور پر چلتا رہا اور کئی بچے حافظ اور مفتی بن کر دینی خدمات انجام دینے کمربستہ ہوئے ۔ چند عرصہ کے بعد اللہ نے دشمنان اسلام کو شکست دی ‘ روسی سلطنت کی پسپائی ہوئی اور اسلامی سلطنتیں قائم ہوئی ۔

اللہ اپنے دین کا محافظ ہے ۔ انہوں نے قرآن احکامات پر عمل پیرا ہونے اور اس کی روزانہ تلاوت کے ذریعہ اپنی دنیا اور آخرت کی زندگی کو سرخروئی بنانے کی تاکید کی ۔ صدر جمعیت العلماء نظام آباد مولانا ولی اللہ قاسمی نے جلسہ سے مخاطب کرتے ہوئے مدارس دینیہ کی اہمیت اور حضرات علماء کرام کی قربانیوں کا ذکر کیا اور کہا کہ دینی مدارس سے فارغ شدہ حضرات علماء کرام نے وطن کی آزادی کی تحریک میں اہم حصہ ادا کیا ۔ 58ہزار حضرات علماء کرام وطن کی خاطر انگریزوں سے لڑکر شہید ہوئے ۔ چالیس علماء کرام کو خنزیر کی کھال میں رکھ کر جلا دیاگیا ۔ مولانا حسین احمد ورنی کو کئی طرح سے تکالیف دی گئی ۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کی تنزالی کا سبب قرآن سے دور ہونا اور آپس میں جھگڑنا ہے ۔مولانا برکت اللہ خان قاسمی استاذ حدیث دارالعلوم سبیل السلام حیدرآباد نے مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ قرآن کریم اللہ کا وہ پاکیزہ کلام ہے جس کا مقابلہ دنیا میں کوئی کلام نہیں کرسکتا ہے ۔ انہوں نے اسلامی ماحول کے فروغ دینے پر زور دیتیہ وئے حفاظ کرام ‘صدر مدرسہ خواتجہ معین الدین بانی مدرسہ مولانا محمد سجاد حسین قاسمی ناظم مدرسہ قاری محمد شفیع الدین اور دیگر منتظمین کو مبارکباد پیش کی ۔

مدرسہ منہاج الدین ولد محمود ‘ محمد سلیمان ولد عبدالرحمن ‘ محمد قاسم ولد عبدالرحمن ‘ سید علیم الدین ولد سید عبدالقادر کی دستاربندی کی گئی ۔ صدر مدرسہ کی جانب سے دستی گھڑیوں کے علاوہ سابق صدر مدرسہ احمد محی الدین مالک جنتا بیڑی کی جانب سے انعامات سے نوازا گیا ۔ اس موقع پر مدرسین مدرسہ قاری محمود الحسین قاسمی قاری محمد فخر الدین ‘ مولانا عبدالحمید قاسمی اور منتظمین و محبین مدرسہ محمد سلیم ‘ عبدالحفیظ ایڈوکیٹ ‘ حافظ محمد عبدالعزیز ‘ مفتی عبدالمعز شامزی ‘ حافظ محمد آصف ‘ مولانا محمد مظفر داودی ‘ مولانا محمد عمر ‘ حافظ محمد عثمان ‘ محمد عبدالقدیر اور دیگر احباب نے جلسہ کی کامیابی میں اپنا بھرپور تعاون پیش کیا ‘ کثیر تعداد میں احباب نے شرکت کی ۔

TOPPOPULARRECENT