رائے بریلی جیل کے سپرنٹنڈنٹ سمیت چھ معطل

لکھنو26نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اترپردیش کے رائے بریلی ضلع میں قیدیوں کو مل رہی سہولیات کے سلسلہ میں وائرل ہوئے ویڈیو کا نوٹس لیتے ہوئے حکومت نے ڈسٹرکٹ جیل کے سینئر سپرنٹنڈنٹ سمیت جیل کے چھ ملازمین کو معطل کردیا ہے ۔گزشتہ دنوں سوشل میڈیا میں ایک ویڈیو وائر ل ہواتھا جس میں کچھ قیدی بیرک میں شراب پیتے اور کسی کاروباری کو موبائل فون سے دھمکاتے ہوئے دکھائے گئے تھے ۔ یدیوں کے پلنگ پر کچھ زندہ کارتوس بکھرے پڑ ے ہوئے تھے ۔ ویڈیو کی حقیقت کی تصدیق اور جیل کے احاطہ میں ملی قابل اعتراض چیزوں ے برآمدہونے کے بعد حکومت کی ہدایت پر ایڈیشنل ڈائرکٹر جنرل جیل اور ضلع انتظامیہ نے مذکورہ کارروائی کی ہے ۔سرکاری ذرائع نے پیر کو بتایا کہ اس معاملہ میں نرمی برتنے کے الزام میں ڈسٹرکٹ جیل کے سینئر سپرنٹنڈنٹ پرمود کمار شکل، کاراپال گووند رام ورما ، ڈپٹی گورنر رام چندر تیواری، ہیڈ جیل وارڈ ر لالتا پرساد اپادھائیے ، جیل وارڈر گنگا رام اور شیو منگل سنگھ کو فوری اثرات سے معطل کردیا گیا ہے ۔ ملزم پولیس ملازمین کے خلاف محکمہ جاتی کارروائی شروع کردی گئی ہے ۔ذرائع نے بتایا کہ ویڈیو میں دکھائے گئے چار قیدی مجرموں کو گزشتہ 19 نومبر کو دیگر جیلوں میں منتقل کردیا گیا ہے ۔ چاروں کے خلاف 21نومبر کو کوتوالی تھانہ میں ایف آئی آر درج کی گئی ۔ اسی روز حکام کے تلاشی لینے پر جیل سے چار موبائل فون اور ایک سم کارڈ برآمد کیا گیا۔حکومت کی ہدایت پر 25نومبر کو ضلع مجسٹریٹ اور سینئر پولیس سپرنٹنڈنٹ نے جیل کے احاطہ میں پھرتلاشی مہم چلائی جس میں بیرکوں سے سگریٹ ، لائٹر، ماچس، مٹھائیاں ، ڈرائی فروٹس سمیت کئی دیگر قابل اعتراض چیزیں برامد ہوئیں۔

TOPPOPULARRECENT