رائے گڑھ میئر کی حیثیت سے ایک زنخا کا انتخاب

حکمران بی جے پی اور اپوزیشن کانگریس امیدواروں کو شکست

حکمران بی جے پی اور اپوزیشن کانگریس امیدواروں کو شکست
رائے گڑھ ۔ 5 ۔ جنوری : ( سیاست ڈاٹ کام ) : ریاست چھتیس گڑھ میں رائے گڑھ میونسپل کارپوریشن کے مئیر کی حیثیت سے ایک زنخا نے کامیابی حاصل کر کے ایک نئی تاریخ رقم کی ہے اور اس نے قریب حریف بی جے پی امیدوار کو شکست دیدی ۔ آزاد امیدوار مدھوکنز نے رائے گڑھ میونسپل کارپوریشن کے مئیر کے انتخابات میں بی جے پی امیدوار مہاویر گرو جی کو 4,537 ووٹوں کی اکثریت سے شکست دے کر کامیابی حاصل کرلی ۔ جب کہ دلت طبقہ سے وابستہ 35 سالہ مدھو پہلا زنخا ہے جس نے ریاست میں مئیر کا انتخاب جیتا ہے ۔ انتخابی نتائج کے اعلان کے بعد مدھو نے بتایا کہ عوام نے مجھ پر اعتماد کیا ہے اور ان کے توقعات کی تکمیل کے لیے ممکنہ کوشش کی جائے گی ۔ آٹھویں جماعت تک تعلیم حاصل کرنے کے بعد مدھو جس کا اصلی نام نریش چوہان ہے مختلف کام کیے اور پیسہ کمانے کے لیے ریل گاڑیوں میں ناچ گانا ، کرتا تھا ۔ اس نے بتایا کہ انتخابی مہم کے دوران 60 تا 70 ہزار روپئے خرچ کئے اور عوام کی ترغیب اور تائید سے میں نے پہلی مرتبہ انتخابات میں حصہ لے کر کامیابی حاصل کی ہے ۔ تاہم ریاست میں حکمران بی جے پی نے مئیر انتخابات کے لیے مہاویر گروجی کو نامزد کیا اور ایک دعویدار مہندر چوتھا کو ٹکٹ دینے سے انکار کردیا گیا جب کہ کانگریس کو یہ امید تھی کہ جیشورام منوہر تیسری مرتبہ کامیابی حاصل کریں گے ۔ ایک زنخا کی کامیابی پر اصل اپوزیشن کانگریس نے کہا کہ یہ بی جے پی کی شکست ہے نہ کہ مدھو کی کامیابی ۔ رائے گڑھ ضلع کانگریس کمیٹی کے صدر مہیندر میگی نے کہا کہ مئیر کے انتخاب میں نریندر مودی کی لہر نہیں تھی ۔ رائے گڑھ کے عوام بی جے پی کی بدعنوانیوں سے بدظن ہوگئے ہیں ۔ جس کی وجہ مدھو کو کامیابی نصیب ہوئی ہے ۔ بی جے پی انتخابی شکست کو تسلیم کرتے ہوئے کہا کہ وہ عوام کے فیصلہ کا جائزہ لیں گے ۔ بی جے پی کے سبکدوش مئیر چواہتا جنہیں اس مرتبہ انتخابی ٹکٹ سے محروم کردیا گیا تھا بتایا کہ عوام نے دو بڑی جماعتوں کے امیدواروں کو مسترد کردیا ۔ لہذا حالات کے مطابق امیدواروں کا انتخاب کرنا چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT