Tuesday , August 14 2018
Home / شہر کی خبریں / راجیہ سبھا سے کانگریس اور دیگر اپوزیشن جماعتوں کا بائیکاٹ

راجیہ سبھا سے کانگریس اور دیگر اپوزیشن جماعتوں کا بائیکاٹ

حکومت پر ایوان کے اندر اور باہر اپوزیشن کی آواز دبانے کا الزام

نئی دہلی ۔6 فبروری ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) کانگریس اور دیگر چند اپوزیشن جماعتوں نے اپنی آواز دبائے جانے کاالزام عائد کرتے ہوئے آج راجیہ سبھا میں کارروائی کا بائیکاٹ کیا ۔دوپہر کے کھانے کے وقفہ کے بعد کارروائی کا بائیکاٹ کرنے والی پارٹیوں میں کانگریس کے علاوہ ٹی ایم سی ، این سی پی ، ڈی ایم کے ، سماج وادی پارٹی ، سی پی آئی (ایم) ، سی پی آئی اور عام آدمی پارٹی (عآپ) بھی شامل ہے۔ ایوان بالا کی کارروائی آج دن میں دو مرتبہ ملتوی ہونے کے بعد سہ پہر 3 بجے تیسری مرتبہ شروع ہوئی جس میں ان پارٹیوں کے ارکان نے حصہ نہیں لیا۔ راجیہ سبھا میں قائد اپوزیشن غلام نبی آزاد نے اخباری نمائندوں سے کہا کہ ’’اپوزیشن کی آواز ایوان کے باہر دبائی جارہی ہے اور ہم ایوان کے اندر بھی ایسا ہونا نہیں چاہتے جس کے لئے ہم صبح ہی سے اس مسئلہ کو اُٹھارہے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ دن بھر کے لئے ہم ایوان کا بائیکاٹ کررہے ہیں‘‘ ۔ انھوں نے الزام عائد کیا کہ دو دن کی کارروائیوں کے دوران پیش آئے مختلف واقعات کو وقفۂ صفر میں موضوع بنایا جانا چاہئے تھا لیکن ارکان نے جب یہ محسوس کیا اُس وقت تک ایوان دوپہر 2 بجے تک ملتوی کیا جاچکا تھا ۔ انھوں نے کہاکہ ’’قواعد بنانے والوں نے یہ گنجائش رکھی ہے کہ کل اور آج صبح کے درمیان پیش آنے والے قومی اہمیت کے حامل مسائل اُٹھائے جاسکتے ہیں اور ہم بھی اس مخصوص مسئلہ کو اُٹھانا چاہتے ہیں ‘‘ ۔ آزاد نے کہاکہ ’’ہم وقفہ سوالات یا حکومت کی مصروفیات میں دراندازی نہیں کررہے ہیں۔ ہم جو کچھ بھی چاہتے ہیں وہ قواعد کے مطابق ہے ۔ لیکن بدقسمتی سے گزشتہ ایک ہفتہ سے ہمیں ان قواعد کے استعمال کی اجازت نہیں دی جارہی ہے ‘‘ ۔ ٹی ایم سی کے ایک رکن کی جانب سے اپنی ریاست ( مغربی بنگال ) سے متعلق مسئلہ اُٹھانے کی کوشش کے بعد راجیہ سبھا کا اجلاس دوپہر 2بجے تک ملتوی کردیا گیا تھا ۔ گزشتہ روز بھی سماج وادی پارٹی نے پولیس انکاؤنٹر کے خلاف ایوان میں نعرہ بازی کی تھی جس کے بعد 2 بجے تک ایوان کی کارروائی ملتوی کردی گئی تھی ۔

TOPPOPULARRECENT