Tuesday , June 19 2018
Home / شہر کی خبریں / راجیہ سبھا کی ایک نشست کیلئے مقابلہ کرنے کانگریس کا فیصلہ

راجیہ سبھا کی ایک نشست کیلئے مقابلہ کرنے کانگریس کا فیصلہ

محمد اظہر الدین امکانی امیدواروں میں شامل ۔ اسمبلی میں مختلف موضوعات پر حکومت کو نشانہ بنانے سی ایل پی اجلاس میں حکمت عملی پر غور
حیدرآباد /9 مارچ ( سیاست نیوز ) کانگریس مقننہ پارٹی اجلاس میں راجیہ سبھا کی ایک نشست کیلئے مقابلہ کا فیصلہ کیا گیا ۔ سابق ہندوستانی کپتان محمد اظہرالدین سابق ایم پی رویندر نائیک یا تلنگانہ پردیش کانگریس خازن جی نارائن میں کسی ایک کو امیدوار بنانے کا فیصلہ کیا گیا ۔ آج سی ایل پی کا تین گھنٹوں تک اجلاس منعقد ہوا جس میں راجیہ سبھا انتخابات میں حصہ لینے کے علاوہ اسمبلی بجٹ سیشن کیلئے 25 موضوعات پر غور و خوص کرکے مستقبل کی حکمت عملی تیار کی گئی ۔ کانگریس سے وفاداری تبدیل کرکے ٹی آر ایس میں شامل ارکان اسمبلی کو پارٹی وہپ کی خلاف ورزی میں پھنسانے کیلئے راجیہ سبھا کی ایک نشست پر مقابلہ کرنے کا فیصلہ کیا گیا ۔ امیدوار کے معاملے میں تین ناموں پر غور کیا گیا ۔ محمد اظہر الدین ، رویندر نائیک اور جی نارائن ریڈی میں کسی ایک کو امیدوار بنانے کا فیصلہ کیا گیا ۔ واضح ہے کہ 2014 کے عام انتخابات میں کانگریس کے 21 ارکان اسمبلی منتخب ہوئے جن میں 7 نے وفاداری تبدیل کرکے ٹی آر ایس میں شمولیت اختیار کی اس کے علاوہ کانگریس کے 2 ارکان اسمبلی کا انتقال ہوگیا ۔ ان حلقوں پر منعقدہ ضمنی انتخابات میں ٹی آر ایس کو کامیابی حاصل ہوئی ۔ فی الحال کانگریس کے ارکان اسمبلی کی تعداد 12 ہے ۔ حال میں ریونت ریڈی تلگودیشم سے کانگریس میں شامل ہوئے ۔ اجلاس میں سکریٹری انچارج تلنگانہ کانگریسا مور آر سی کنٹیا ، صدر تلنگانہ پردیش کانگریس اتم کمار ریڈی قائد اپوزیشن کونسل محمد علی شبیر کے علاوہ ارکان اسمبلی ارکان ساز کونسل نے شرکت کی ۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے رکن اسمبلی سمپت کمار نے کہا کہ 13 مارچ کو ایم آر پی ایس نے تلنگانہ بند منانے کا فیصلہ کیا ہے جس کی کانگریس نے تائید و حمایت سے اتفاق کیا ہے ۔ اسمبلی اور کونسل میں عوامی مسائل کو موضوع بحث بنانے کا فیصلہ کیا گیا ۔ جس میں 12 فیصد مسلم تحفظات کے علاوہ قبائلی تحفظات پر حکومت کو جھنجھوڑنے دلتوں پر حملے کسانوں کے مسائل لا اینڈ آرڈر ، سیاسی قتل ، ملازمت کی فراہمی میں حکومت کی ناکامی وغیرہ کو موضوع بحث بنانے کا فیصلہ کیا گیا ۔ سمپت کمار نے کہا کہ یہ بجٹ سیشن ٹی آر ایس حکومت کا آحری بجٹ سیشن ثابت ہوگا ۔ کانگریس پارٹی عوامی مسائل پر ایوان میں حکومت سے آر پار کی لڑائی لڑے گی ۔ کسانوں کے مسائل پر زیادہ دیر تک گفگو کی گئی ۔ ٹی آر ایس کے انتخابی منشور میں جو وعدے کئے گئے اس کی عدم عمل آوری پر حکومت سے وضاحت طلب کی جائے گی ۔

TOPPOPULARRECENT