Friday , November 24 2017
Home / Top Stories / راہول گاندھی ملک کی ایک اور تقسیم کے خواہاں : امیت شاہ

راہول گاندھی ملک کی ایک اور تقسیم کے خواہاں : امیت شاہ

جو حکومت کے خیال سے اتفاق نہیں کرتا اسے دہشت گرد قرار دیا جارہا ہے :کانگریس نائب صدر ۔ جے این یو مسئلہ پر لفظی تکرار
نئی دہلی / گوہاٹی 15 فبروری ( سیاست ڈاٹ کام ) جواہر لال نہرو یونیورسٹی تنازعہ پر سخت الزامات عائد کرتے ہوئے بی جے پی صدر امیت شاہ نے آج الزام عائد کیا کہ راہول گاندھی قوم دشمنوں کی تائید کر رہے ہیں اور چاہتے ہیں کہ ہندوستان کی ایک اور تقسیم ہو جبکہ کانگریس نائب صدر نے کہا کہ بی جے پی تقسیم اور نفرت پیدا کرنے کے ایجنڈہ پر عمل کر رہی ہے ۔ بی جے پی اور کانگریس کے مابین اس مسئلہ پر الزامات و جوابی الزامات کے دوران سی پی ایم جنرل سکریٹری سیتارام یچوری نے گوڈسے کی پرستش کرنے والوں کو نشانہ بنایا اور کہا کہ یہ لوگ قوم پرستی کی سند تقسیم کر رہے ہیں۔ انہوں نے بائیں بازو کی طاقتوں کو قوم مخالف قرار دئے جانے کی سخت الفاظ میں مذمت کی ۔ یچوری کے پیشرو پرکاش کرت نے بھی این ڈی اے حکومت کی اعلی مشنری پر جواہر لال نہرو یونیورسٹی میں بحران پیدا کرنے کا الزام عائد کیا اور کہا کہ نریندر مودی حکومت ملک کی یونیورسٹیز میں اپنے نظریات مسلط کرنا چاہتی ہے ۔ جواہر لال نہرو یونیورسٹی تنازعہ پر پہلی مرتبہ لب کشائی کرتے ہوئے بی جے پی کے صدر امیت شاہ نے کانگریس کی صدر سونیا گاندھی اور راہول گاندھی سے کئی سوالات کئے ہیں اور مطالبہ کیا کہ اس مسئلہ پر ان کا جو موقف ہے اس کیلئے دونوں کو قوم سے معذرت خواہی کرنی چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ بائیں بازو کے ترقیاتی نظریات کے نام پر قوم مخالف طاقتوں کی تائید کرنا قابل قبول نہیں ہوسکتا ۔ انہوں نے کہا کہ قومی دارالحکومت میں ایک بڑی یونیورسٹی کو بدنام کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے ۔ وہ راہول گاندھی سے یہ سوال کرتے ہیں کہ آیا یہ ملک کے مفاد میں ہوتا تو کیا مرکزی حکومت خاموش رہتی ؟ ۔ انہوں نے راہول سے سوال کیا کہ کیا وہ ان قوم مخالف عناصر کی تائید میں مظاہرہ کرتے ہوئے غداروں کی تائید نہیں کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جے این یو میں پاکستان زندہ باد ‘ ہندوستان واپس جاؤ ‘ کشمیر کی آزادی کے حق میں اور پارلیمنٹ حملہ کیس میں سزا یافتہ افضل گرو کے حق میں نرے لگائے گئے تھے ۔ انہوں نے سوال کیا کہ آیا کانگریس لیڈر نے علیحدگی پسندوں سے ہاتھ تونہیں ملالیا ہے ۔ انہوں نے سوال کیا کہ کیا راہول گاندھی ملک کی ایک اور تقسیم چاہتے ہیں۔ راہول گاندھی نے بھی آسام میں خطاب کرتے ہوئے جے این یو تنازعہ پربی جے پی اور آر ایس ایس کو تنقید کا نشانہ بنایا انہوں نے کہا کہ دونوں کے پاس قوم کے کلچر اور کثرت کا احترام نہیں ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ ہر ایک کے خیالات پر کنٹرول کریں۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی اور آر ایس ایس کے پاس قوم کے جذبات کی کوئی قدر نہیں ہے وہ ہر ایک کے خیالات کو کنٹرول کرنا چاہتے ہیں۔ بی جے پی اور آر ایس ایس نفرت اور تقسیم کے ایجنڈہ پر عمل کر رہے ہیں۔ انہیں ہر جگہ دہشت گردی نظر آتی ہے ۔ یونیورسٹیز میں بھی انہیں دہشت گردی نظر آتی ہے اور جو کوئی ان کے خیالات سے اتفاق نہیں کرتا وہ دہشت گرد ہوجاتا ہے ۔ پرکاش کرت نے اپنے رد عمل میں کہا کہ جب سے مودی حکومت اقتدار پر آئی ہے ملک بھر میں یونیورسٹیز کو نشانہ بنایا جارہا ہے اور نظریات مسلط کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT