Thursday , June 21 2018
Home / Top Stories / راہو ل گاندھی کو دن میں خواب دیکھنے کی پابندی نہیں :جاؤڈیکر

راہو ل گاندھی کو دن میں خواب دیکھنے کی پابندی نہیں :جاؤڈیکر

وزیراعظم بننے صدر کانگریس کی خواہش پر بی جے پی لیڈر کا ریمارک ، 20 ریاستوں سے محرومی نے بوکھلاہٹ کا شکار بنادیا ہے
ممبئی ۔ 22 مئی ۔( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی وزیر پرکاش جاؤڈیکرنے آج کہاکہ صدر کانگریس راہول گاندھی کو وزیراعظم بننے کی خواہش ہے ، انھیں دن میں خواب دیکھنے کی کوئی پابندی نہیں ہے ۔ راہول گاندھی نے حال ہی میں کہاتھا کہ وہ وزیراعظم بننے کیلئے تیار ہیں ، اس پر جاؤڈیکرنے ریمارک کیا اور کہا کہ صدر کانگریس کو دن میں خواب دیکھنے سے کس نے روکا ہے ؟ کانگریس 20 ریاستوں سے محروم ہوچکی ہے ، اب اس کا صرف ایک یا دو ریاستوں پر قبضہ ہے ۔ اگر اس بنیاد پر راہول گاندھی سونچ رہے ہیں کہ وہ اس ملک کے وزیراعظم بن سکتے ہیں تو پھر انھیں دن میں خواب دیکھنے کی کوئی پابندی نہیں ہے ۔ جاؤڈیکرنے علاقائی ٹیلی ویژن چینل سے کہا کہ ٹوئیٹر پر ایک اسمارٹ ٹوئیٹ کرنے سے کوئی وزیراعظم نہیں بن جاتا ! بڑی باتیں کرنا کوئی سیاست نہیں کہلاتی بلکہ سیاست اس سے کہیں بڑھکر ہوتی ہے ۔ 1984ء میں بی جے پی کے لوک سبھا میں صرف دو ارکان پارلیمنٹ تھے اور اب اس نے 2014 ء عام انتخابات میں 282 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے ۔ 1984 ء میں کانگریس کے پاس زائد از 400 نشستیں تھیں اور اب وہ گھٹ کر 44 ہوگئی ہیں۔ ہماری اس مثال سے کانگریس کو سبق حاصل ہونا چاہئے ۔ کرناٹک کے حالیہ سیاسی منظرنامہ کے تعلق سے انھوں نے کہا کہ اس جنوبی ریاست کے گورنر نے دستوری ڈھانچہ کے اندر رہکر ہی بی جے پی کو تشکیل حکومت کی دعوت دی تھی ، جب ہم نے محسوس کیا کہ ہمارے پاس قابل لحاظ اکثریت نہیں ہے تو ہمارے چیف منسٹر نے استعفیٰ دیدیا۔ پنجاب نیشنل بینک اسکام میں ملوث ہیروں کے تاجر نیرو مودی کے تعلق سے بی جے پی لیڈر نے کہاکہ یہ اسکام کانگریس حکومت کے دوران ہی ہوا تھا لیکن ہم نے اس سلسلے میں 13 افراد کو گرفتار کیا ہے اور ان کی جائیدادوں کو ضبط کیا ہے جن کی لاگت کروڑہا روپئے ہے ۔ کانگریس مکت بھارت سے متعلق بی جے پی کے نعرے پر مرکزی وزیر نے کہا کہ اس کا مطلب یہی ہے کہ اس ملک کو خاندانی حکمرانی کی سیاست سے آزاد کیاجائے ۔ مخصوص افراد کی لابی کو حاصل ہونے والے فوائد روک دیئے جائیں ۔ ہندوستانی سیاست میں اب تک ایک خراب کلچر فروغ پایا تھا اور کانگریس نے اس کلچر کو پھیلایا تھا ، اب ہم اس کلچر کی مخالفت کرتے ہوئے اسے ختم کرنا چاہتے ہیں ۔ یہ پوچھے جانے پر کہ راہول گاندھی نے بھی مودی مکت بھارت کانعرہ استعمال کیا ہے تو انھوں نے دعویٰ کیا کہ اس نعرہ کا عوام پر کوئی اثر نہیں ہوگا ۔ مخالف مودی سوچ کو ایک منفی سیاست کا حصہ تصور کیا جارہا ہے ۔ قومی پارٹی ہونے کے باوجود اگر کانگریس کہہ گی کہ وہ نریندر مودی کی مخالفت کررہی ہے تو اس کا مطلب اس نے منفی سیاست کا سہارا لیا ہے ۔ جاؤڈیکرنے اعتماد کا اظہار کیا کہ ان کی پارٹی بی جے پی نہ صرف 2019 ء کے عام انتخابات میں کامیاب ہوگی بلکہ مغربی بنگال ، اُڈیسہ ، ٹاملناڈو اور کیرالا میں بھی پہلے سے زیادہ بہتر مظاہرہ کرے گی اور ملک کے اندر موجودہ بنیاد پر قائم رہتے ہوئے اقتدار پر برقرار رہے گی ۔

TOPPOPULARRECENT