Sunday , December 17 2017
Home / شہر کی خبریں / رقم نکالنے کی حد میں اضافہ پر سرچارج لگانے کا امکان

رقم نکالنے کی حد میں اضافہ پر سرچارج لگانے کا امکان

نوٹ بندی کے بعد نقد بندی ، مرکزی حکومت کے نئے قوانین زیر غور
حیدرآباد ۔ 22 ۔ دسمبر : ( سیاست نیوز ) : مرکزی حکومت نوٹ بندی کے 50 دن مکمل ہونے کے بعد بینکوں اور اے ٹی ایم سے رقم نکالنے کی حد میں اضافہ کرنے کا سنجیدگی سے جائزہ لے رہی ہے ۔ تاہم نقد رقم نکالنے والوں کو سرچارج لگانے کا خطرہ بھی بڑھ گیا ہے ۔ کالا دھن ، بلیک منی ، نقلی کرنسی اور دہشت گردی کا خاتمہ کرنے کے لیے بڑی نوٹوں کے چلن کو منسوخ کرنے کا اعلان کیا گیا مگر تمام منسوخ شدہ نوٹ بینکوں میں ڈپازٹ ہوجانے کے بعد نوٹ بندی کا فیصلہ اب نقد بندی میں تبدیل ہوتا نظر آرہا ہے کیوں کہ مرکزی حکومت ہندوستان کو کیاش لیس سوسائٹی میں تبدیل کرنے کے لیے بڑے پیمانے پر اقدامات کررہی ہے اور ملک کے تمام ریاستوں کو بھی اس جانب قدم بڑھانے کی ہدایت دے دی گئی ہے ۔ باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ مرکزی حکومت 30 دسمبر کے بعد بینکوں سے ڈپازٹ نکالنے کی حد میں اضافہ کرسکتی ہے ۔ مگر اس کے لیے بھی کئی شرائط لگانے کی حکمت عملی تیار کی جارہی ہے ۔ پہلے عوام کو کریڈٹ کارڈ ، ڈبٹ کارڈ ، اے ٹی ایم کے استعمال پر ٹیکس عائد کیا جاتا تھا ۔ اب بینکوں سے نقد رقم نکالنے یا مقرر کردہ حد سے زیادہ لین دین نقد رقم کی شکل میں کرنے کی صورت میں 2 تا 5 فیصد ٹیکس عائد کرنے پر غور کیا جارہا ہے ۔ ان شرائط کی روشنی میں بینکوں سے روزانہ 50 ہزار روپئے اور اے ٹی ایم سے 15 ہزار روپئے نکالنے کی اجازت دی جاسکتی ہے ۔ تاہم اس معاملے میں مرکزی حکومت نے سرکاری طور پر کوئی قطعی فیصلہ نہیں کیا ہے ۔ 500 اور 1000 روپئے کی منسوخ شدہ نوٹ بینکوں میں جمع ہوجانے کے بعد وزیراعظم اور مرکزی حکومت تذبذب کا شکار ہے ۔ کریں تو کیا کریں ؟ کیوں کہ جن مقاصد کے لیے نوٹ بندی کا فیصلہ کیا گیا تھا وہ مقصد تو پورا نہیں ہوا ہے ۔ الٹا عوام کو مشکلات ہوئی ہیں کاروبار متاثر ہوا ہے ۔ حکومت کی آمدنی گھٹ گئی ہے ۔ بینکوں اور اے ٹی ایم کے سامنے عوام کی قطار کم نہیں ہوئی ہے ۔ تقریبا ملک بھر میں 100 افراد فوت ہوئے ہیں ۔ وزیراعظم نریندری مودی کے علاوہ بی جے پی کے سینئیر قائدین ملک کے مختلف شہروں کا دورہ کرتے ہوئے مرکزی حکومت کے فیصلوں کی مدافعت کررہے ہیں ۔ مگر عوامی ناراضگی جوں کی توں برقرار ہے ۔ وزیراعظم نے 50 دن کے بعد حالت سازگار ہونے کا ملک کے عوام کو یقین دلایا تھا تاہم جنوری سے بینک اور اے ٹی ایم سے رقم نکالنے پر سرچارج اور شرائط عائد کرنے کی منصوبہ بندی تیار کرنے سے عوام کی ناراضگی میں مزید اضافہ ہوسکتا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT