Tuesday , September 25 2018
Home / Top Stories / رمضان میں یکطرفہ جنگ بندی کی تجویز ’سیاسی کھیل ‘

رمضان میں یکطرفہ جنگ بندی کی تجویز ’سیاسی کھیل ‘

اسلام اور قرآن میں روزہ داروں کو تشدد سے گریز کی تعلیم : مرکزی وزیر جیتندر سنگھ
جموں ۔ 12 مئی (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی وزیر جیتندر سنگھ نے آج کہا کہ جموں و کشمیر میں رمضان کے دوران مرکز کی طرف سے جنگ بندی کی وکالت کرنے والی جماعتیں رمضان پر سیاسی کھلواڑ کررہی ہیں اور ادعا کیا کہ حکومت کے پاس پاکستان اور دہشت گردی کے بارے میں حکومت کی ایک پائیدار پالیسی ہے۔ جیتندر سنگھ نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’’یکطرفہ جنگ بندی کی تجویز رکھنے والوں سے میں ایک سوال کرنا چاہتا ہوں کہ آیا وہ اسلام کے سچے پیروکار ہیں؟ جہاں تک ہم اسلام اور مقدس قرآن کو سمجھتے ہیں (اس کے مطابق) روزہ داروں کے لئے یہ لازمی ہے کہ وہ کسی کو کوئی ضرر نہ پہونچائیں اور کسی تشدد میں ملوث نہ ہوں۔ انہیں (عسکریت پسندوں کو) مشورہ دینے کے بجائے دوسروں کیلئے تجویز پیش کرنے کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ آپ رمضان پر ایقان نہیں رکھتے بلکہ اس پر سیاسی کھلواڑ کررہے ہیں‘‘۔ ریاستی چیف منسٹر محبوبہ مفتی نے 9 مئی کو کہا تھا کہ وسط مئی میں شروع ہونے والے ماہ رمضان سے اگست میں امرناتھ یاترا کی تکمیل تک مرکز کو یکطرفہ جنگ بندی کے نفاذ کے بارے میں غور کرنا چاہئے۔ محبوبہ مفتی نے کل جماعتی اجلاس سے بھی کہا تھا کہ ’’ہر کسی (تمام جماعتوں) نے اتفاق کیا کہ ہمیں مرکز سے یکطرفہ جنگ بندی کے نفاذ کی اپیل کرنا چاہئے جس طرح (سابق وزیراعظم اٹل بہاری) واجپائی کے دور میں رمضان کے دوران جنگ بندی نافذ کی گئی تھی۔

TOPPOPULARRECENT