Wednesday , December 19 2018

رورل واٹر سپلائی اسکیمات کو بہتر بنانے پر زور

وزیر پنچایت راج کے تارک راما راؤ کا جائزہ اجلاس

وزیر پنچایت راج کے تارک راما راؤ کا جائزہ اجلاس
حیدرآباد ۔ 6 ۔ جون : ( آئی این این ) : تلنگانہ کے وزیر پنچایت راج کے تارک راما راو نے دیہی آبی سربراہی اور پنچایت راج محکمہ جات کی کارکردگی پر ایک تفصیلی جائزہ اجلاس منعقد کیا ۔ کل منعقدہ اس اجلاس میں پرنسپال سکریٹری جے ریمنڈ پیٹر اور دیگر سینئیر عہدیداروں نے شرکت کی ۔ عہدیداروں نے بتایا کہ تلنگانہ میں 27139 بستیاں ہیں جہاں 2.15 کروڑ عوام بستے ہیں ۔ ان میں 13156 بستیوں میں پینے کے پانی کا خاطر خواہ سربراہی نہیں ہے ۔ تاحال تقریبا 41.20 فیصد بستیوں کا احاطہ کیا گیا ہے ۔ ضلع کریم نگر کو آر ڈبلیو ایس کے تحت بہت کم کور کیا گیا جو 28.26 فیصد ہے ۔ عہدیداروں نے کہا کہ تقریبا 1847 بستیوں میں فلورائیڈ کا مسئلہ ہے اور اس مسئلہ کو جلد حل کرنے کی ضرورت ہے ۔ 20,000 سنگل ولیج اسکیمس کے منجملہ تقریبا 3500 اسکیمس کو 100کروڑ روپئے لاگت سے مکمل کرنے کی ضرورت ہے ۔ محکمہ سے اس طرح کی تمام اسکیمس کی نشاندہی کرنے اور اس طرح کی اسکیمات کو ترجیحی طور پر کور کرنے کو یقینی بنانے کے لیے کہا گیا ہے ۔ تقریبا 200 جامع اسکیمات جو محفوظ پانی کی سربراہی کے لیے ہے جسے تقریبا 500 کروڑ روپئے لاگت سے مکمل کیا گیا ہے ۔ ترجیحی طور پر کارکرد بنانے کی ضرورت ہے ۔ وزیر موصوف نے کہا کہ محکمہ کو اس طرح کی تمام بستیوں کی نشاندہی کرنے کے لیے تمام تر اقدامات کرنے ہوں گے جنہیں پی ڈبلیو ایس کی کسی اسکیم کے تحت کور نہیں کیاگیا ہے ۔ ان محکمہ جات سے کہا گیا کہ پی ڈبلیو ایس اسکیمس کو بہتر بنانے کے سلسلہ میں ایک منصوبہ بنائیں ۔ انہوں نے کہا کہ ضلع نلگنڈہ میں فلورائیڈ سے متاثرہ مواضعات کے لیے ایک جامع پروگرام کی ضرورت ہے ۔ کے ٹی آر نے کہا کہ برقی بچت اور منٹیننس کے اخراجات میں کمی کے لیے شمسی توانائی یونٹس کا جائزہ لیا جائے اور حکومت کو اس سلسلہ میں تجاویز پیش کی جائیں تاکہ کوئی پالیسی فیصلہ کیا جاسکے ۔ نرمل بھارت ابھیان اسکیم کے تحت شروع کئے گئے سینٹری لاٹرینس 6.45 ( بی پی ایل ) ، 0.50 لاکھ ( اے پی ایل ) ، کمیونٹی سینٹری کامپلکس (176) کی گراونڈنگ اور تکمیل میں تیزی پیدا کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ پنچایت کے کمپیوٹرائزیشن کے کام میں تیزی پیدا کی جائے گی اور انہیں می سیوا سنٹرس کی طرح سرویس ڈیلیوری کے لیے مرکز بنایا جائے گا ۔ رورل واٹر سپلائی کے لیے ایک ٹاسک فورس تشکیل دینے کا بھی فیصلہ کیا گیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT