Monday , September 24 2018
Home / دنیا / روس پر خلائی انحصار کے خاتمے کیلئے امریکی پیش رفت

روس پر خلائی انحصار کے خاتمے کیلئے امریکی پیش رفت

واشنگٹن ۔ 17ستمبر ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) امریکی خلائی ادارے ناسا نے اپنے خلا نوردوں کو انٹرنیشنل اسپیس سینٹر تک پہنچانے کیلئے بوئنگ اور اسپیس ایکس کے ساتھ نیا خلائی جہاز بنانے کا معاہدہ کر لیا ہے۔یہ کمپنیاں نیا خلائی جہاز 2017ء تک مکمل کریں گی۔ ناسا نے اس پیش رفت کا خیرمقدم کیا ہے جس کی تکمیل سے امریکہ کا روس پر انحصار ختم ہو جائے گا۔2011ء می

واشنگٹن ۔ 17ستمبر ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) امریکی خلائی ادارے ناسا نے اپنے خلا نوردوں کو انٹرنیشنل اسپیس سینٹر تک پہنچانے کیلئے بوئنگ اور اسپیس ایکس کے ساتھ نیا خلائی جہاز بنانے کا معاہدہ کر لیا ہے۔یہ کمپنیاں نیا خلائی جہاز 2017ء تک مکمل کریں گی۔ ناسا نے اس پیش رفت کا خیرمقدم کیا ہے جس کی تکمیل سے امریکہ کا روس پر انحصار ختم ہو جائے گا۔2011ء میں خلائی شٹل کی ریٹائرمنٹ کے بعد ناسا اپنے خلانوردوں کو روسی خلائی جہازوں کے ذریعے خلا میں بھیج رہا ہے۔ تاہم اس نے اب اپنے طیارے کیلئے بوئنگ اور اسپیس ایکس کے ساتھ 6.8 بلین ڈالر کا معاہدہ کیا ہے۔ ناسا کے ایڈمنسٹریٹر چارلس بولڈین کا کہنا ہے کہ بوئنگ کیلئے اس معاہدے کی مجموعی مالیت 4.2 بلین ڈالر ہے جبکہ اسپیس ایکس کیلئے 2.6 بلین ڈالر ۔ یوکرین کے تنازعہ پر روس اور امریکہ کے درمیان اختلافِ رائے کا اثر خلائی تعاون پر بھی پڑا ہے۔ اب روس اپنے خلائی جہاز میں امریکہ سے فی نشست 70 ملین ڈالر وصول کر رہا ہے جو امریکی حکام کے مطابق انتہائی زیادہ ہیں۔اوباما انتظامیہ نے ناسا کو اپنا خلائی جہاز حاصل کرنے کا کام 2010ء میں سونپا تھا تاکہ خلا نوردوں کو انٹرنیشنل اسپیس سینٹر میں پہنچانے کی صلاحیت بحال کی جا سکے۔اس وقت سے ہی اس ادارے نے اس مقصد کیلئے ڈیڑھ بلین ڈالر کے فنڈز جاری کئے ہیں۔ اس میں سے زیادہ رقوم بوئنگ، اسپیس ایکس اور سیرا نیواڈا کارپوریشن کو دی گئیں۔اب بجٹ کی بندشوں کی وجہ سے حتمی مرحلے کیلئے دو کمپنیوں کا انتخاب کیا گیا ہے۔ چارلس بولڈین کا کہنا ہے کہ پہلے دِن سے ہی، اوباما انتظامیہ نے یہ واضح کر دیا تھا کہ خلاء میں جانے کیلئے اس زمین پر عظیم قوم کا انحصار دوسری قوموں پر نہیں ہونا چاہیے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT