Monday , December 18 2017
Home / کھیل کی خبریں / روس کی ڈوپنگ میں ملوث کھلاڑیوں کیخلاف تحقیقات

روس کی ڈوپنگ میں ملوث کھلاڑیوں کیخلاف تحقیقات

ماسکو ، 12 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) کھیلوں میں ممنوعہ ادویات کے انسداد کے عالمی ادارہ (ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی) کی رپورٹ کے تناظر میں روس کے صدر ولاد میر پیوٹن نے ڈوپنگ میں ملوث روسی کھلاڑیوں کے خلاف تحقیقات کا حکم دیا ہے۔ رواں ہفتے ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کے ایک آزاد کمیشن نے اپنی رپورٹ میں کہا تھا کہ روسی کھلاڑیوں نے انسدادِ ممنوعہ ادویات کے افسران کو رشوت دے کر ممنوعہ ادویات استعمال کیں اور ان کے استعمال کے ٹسٹ کے نتائج پر پردہ ڈالا۔ صدر پیوٹن نے کہا ہے کہ وہ ممنوعہ ادویات کے انسداد کے عالمی ادارے کے ساتھ ’پیشہ ورانہ تعاون‘ کرنا چاہتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ’’مسابقت ہونی چاہئے اور کھیلوں کے مقابلے میں دلچسپی اُسی وقت ہوگی جب وہ بالکل شفاف ہوں‘‘۔ اس سے قبل روس کے وزیر کھیل نے کہا تھا کہ ’’برطانیہ کے اینٹی ڈوپنگ سسٹم کی کوئی قدر نہیں ہے اور وہ روس سے بدتر ہے‘‘۔ روس کے ذرائع ابلاغ اور کھیل کی وزارت نے ڈوپنگ میں ملوث ہونے کے الزامات کو مسترد کیا تھا۔ روس کے صدر نے کہا کہ کسی نہ کسی کو تو اس کی ذمہ داری قبول کرنا ہو گی اور کوتاہیوں کا پتہ لگانا ہو گا۔ ’’میں نے وزیر کھیل اور دیگر ساتھی جو کھیل سے منسلک ہیں، اُن سے کہا ہے کہ اس مسئلے پر ہر ممکن توجہ دی جائے۔ یہ ضروری ہے کہ ہم اپنے طور پر تحقیقات کروائیں اور میں اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کے ساتھ پیشہ ورانہ تعاون کیلئے تیار ہوں۔‘‘ انٹرنیشنل اتھلیٹکس فیڈریشن کے صدر نے روس کی فیڈریشن کو بتایا ہے کہ وہ ڈوپنگ سے متعلق رپورٹ پر اپنا موقف رواں ہفتے پیش کریں گے۔ واڈا کی رپورٹ کے مصنف ڈک پاؤنڈ نے تجویز دی ہے کہ 2016ء کے اولمپکس میں روس کی شمولیت معطل کر دینی چاہئے، جس کے بعد انٹرنیشنل اولمپکس کمیٹی کے صدر نے کہا کہ اْن کے پاس ایسے کرنا کا ’اختیار‘ نہیں ہے اور اس سلسلے میں فیصلہ انٹرنیشنل اتھلیٹکس فیڈریشن کرے گا۔

TOPPOPULARRECENT