Saturday , December 15 2018

روہنگیاؤں کی نسل کشی کا سلسلہ ہنوز جاری : اقوام متحدہ

ینگون ۔ 6 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے قاصد نے آج ایک اہم بیان دیتے ہوئے کہا کہ چھ ماہ گزرجانے کے باوجود میانمار روہنگیا مسلمانوں کو راکھین اسٹیٹ میں خوفزدہ کرتے ہوئے انہیں فاقہ کشی پر مجبور کررہا ہے اور اس طرح روہنگیاؤں کی نسل کشی کا سلسلہ چھ ماہ گزرجانے کے باوجود بدستور جاری ہے۔ یاد رہیکہ چھ ماہ قبل روہنگیاؤں پر شدید ظلم و جبر اور قتل عام کے بعد لاکھوں کی تعداد میں روہنگیا مسلمان فرار ہوکر بنگلہ دیش آ گئے تھے۔ بنگلہ دیش پہنچ کر انہوں نے مختلف پناہ گاہوں میں پناہ ضرور لی ہے لیکن انہیں وہاں کوئی بھی بنیادی سہولت حاصل نہیں ہے۔ انہوں نے میانمار کے راکھین اسٹیٹ میں عصمت ریزی، آتشزنی اور قتل کے رونگٹے کھڑے کرنے والے واقعات بیان کئے ہیں۔ نہ صرف بودھ راہب بلکہ میانمار کی فوج نے بھی روہنگیاؤں پر ظلم و جبر کے پہاڑ توڑے۔ اقوام متحدہ میں انسانی حقوق کے معاون سکریٹری جنرل اینڈریو گلمور نے بنگلہ دیش میں بھیڑبھاڑ والے ایک پناہ گزین کیمپ میں روہنگیائی مسلمانوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میانمار میں روہنگیاؤں کی نسل کشی کا سلسلہ ہنوز جاری ہے۔ میں نے کاکس بازار میں جو کچھ دیکھا ہے اسے دیکھنے کے بعد میں کوئی دوسری رائے قائم نہیں کرسکتا۔ بس اتنا ہی کہہ سکتا ہوں کہ ظلم و جبر نے اپنی شکل بدل لی ہے۔ پہلے اجتماعی عصمت ریزی اور قتل کے واقعات رونما ہورہے تھے اور اب منصوبہ بند طریقہ پر روہنگیاؤں کیلئے ایسے حالات پیدا کئے گئے ہیں جہاں وہ فاقہ کشی پر مجبور ہیں۔ دوسری طرف میانمار کی فوج روہنگیاؤں کو بنگلہ دیش فرار ہونے پر مجبور کررہی ہے لہٰذا یہ بات بلا پس و پیش کہی جاسکتی ہیکہ موجودہ حالات میں روہنگیاؤں کا محفوظ اور باعزت طور پر میانمار واپس جانا ناممکن ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT