Saturday , November 18 2017
Home / شہر کی خبریں / روہنگیا مسلمانوں کو ہندوستان میں پناہ دینے پر زور

روہنگیا مسلمانوں کو ہندوستان میں پناہ دینے پر زور

تنظیم انصاف کا دہلی میں احتجاج، سید عزیز پاشاہ و دیگر کا خطاب
حیدرآباد۔16ستمبر(سیاست نیوز) کل ہند تنظیم انصاف نے دہلی کے جنتر منترپر روہنگیوں کے ساتھ انصاف رسانی کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاجی دھرنا منظم کیا۔ صدر تنظیم وسابق رکن پارلیمنٹ راجیہ سبھا جناب سیدعزیز پاشاہ نے قیادت کی۔ اے آئی ایس ایف کے قومی جنرل سکریٹری وشواجیت کمار‘ ایو ب خان‘ ریاستی جنرل سکریٹری انصاف تلنگانہ منیر پٹیل کے علاوہ دیگر نے شرکت کی۔ اس موقع پر جناب سیدعزیز پاشاہ نے کہاکہ ہندوستان کی قدیم روایت رہی ہے کہ دنیا بھر میںجہاں کہیں کوئی پریشان حال ہواس کو بلاتفریق مذہب ‘ ملک اپنی سرحدیں کھول دینا ہے مگر روہنگی مسلمانوں کے متعلق حکومت کا رویہ معنی خیز ہے۔ اقوام متحدہ نے روہنگی مسلمانوں کے متعلق واضح کردیا ہے کہ مذکورہ لوگ دنیا کے سب سے زیادہ ستائے ہوئے ہیں اس کے باوجود حکومت ہند اقوام متحدہ کے اجلاس میں میانمار پر دبائو کی حکمت عملی بنانے میںناکام رہا ہے۔ اقوام متحدہ کو چاہئے کہ میانمار کی اسٹیٹ کونسلر آن سانگ سوچی کے نوبل انعام واپس لے ۔ انہوں نے کہاکہ برسوں سے مصیبتوں کا سامنا کرتے ہوئے میانمار کی عوام کو انصاف دلانے والی آنگ سانگ سوچی خود اب روہنگی مسلمانوں کے ساتھ انصاف کرنے میںناکام ہوگئی ہے۔ روہنگی مسلمانوں کے تئیں حکومت کے معاندانہ رویہ پر انہوں نے تشویش کا اظہار کیا۔ انہو ںنے کہا کہ ایک لاکھ سے زائد دیگر ممالک کے پناہ گزینوں کو ہندوستان میں قیام کا موقع فراہم کیاگیا ہے مگر صرف چالیس ہزار روہنگیوں سے حکومت ہند کو کس بات کا خدشہ لاحق ہے یہ بات سمجھ نہیںآرہی ہے۔ جناب سیدعزیز پاشاہ نے حکومت نے کہاکہ راکھین میں روہنگیوں کے لئے زمین تنگ کی جارہی ہے اور منظم انداز میں ان کی نسل کشی کی جارہی ہے۔ ایسے میںہندوستان میںمقیم روہنگیوں کو واپس روانہ کرنا گویا دوبارہ انہیںموت کے منھ میںڈھکیلنے کے مترادف ہوگا۔ جناب عزیز پاشاہ نے کہاکہ ہندوستان میںمقیم روہنگیوں کا کہنا ہے کہ وہ ہندوستان میں مر کر یہاں پر دفن ہونے کو ترجیح دیں گے مگر میانمار واپس نہیںجائیں گے ۔ انہوں نے بتایا کہ ان پناہ گزینوں کو خدشہ ہے کہ میانمار میںانہیںہلاک کرنے کے بعد دفن کا موقع بھی نہیںدیاجائے گا۔ جناب سیدعزیز پاشاہ نے حکومت ہند سے مطالبہ کیا کہ وہ ہندوستا ن میںمقیم چالیس ہزار پناہ گزینوں کے متعلق اپنے موقف میںنرمی لائے اور انہیںراکھین کے حالات میںسدھار آنے تک ہندوستان میںہی قیام کا موقع فراہم کرے۔قبل ازیں انصاف کے قائدین نے دہلی سی پی آئی ہیڈکوارٹر سے میانمار سفارت خانے تک ایک ریالی بھی نکالی اور وہاں پراحتجاج کرنے کی کوشش کی مگر پولیس کی عدم اجازت کے بعد وہ جنتر منتر پہنچ کرروہنگیوں کے ساتھ اظہار یگانگت کیا۔

 

TOPPOPULARRECENT